ہائیکورٹ ، لڑکیوں کی سمگلنگ میں ملوث 3 ملزمان کو وکلاءنے فرار کروا دیا

ہائیکورٹ ، لڑکیوں کی سمگلنگ میں ملوث 3 ملزمان کو وکلاءنے فرار کروا دیا

لاہور (نامہ نگار خصوصی ) غریب لڑکیوں کو اغواءکرکے جسم فروشی کروانے اورانہیں بیرون ملک فروخت کرنے کے مقدمہ کے 3 ملزموں کو وکلاءنے لاہور ہائیکورٹ سے فرارکرادیا،ملزموں کو گرفتار کرنے کی کوشش پر وکلانے پولیس اہلکاروں کو تشددکانشانہ بھی بنایا،عدالتی سیکیورٹی پر ماموراہلکاروں نے چوتھے ملزم کو گرفتارکرلیا۔ لاہور ہائیکورٹ کے مسڑ جسٹس عبدالسمیع خان نے ملزموں کی حبس بے جا کی درخواست پر سماعت کی،درخواست گزار محسن رضا نے عدالت کو بتایا کہ پولیس نے چار افراد کو حبس بیجا میں رکھا ہے۔تھانہ صدر فیصل آباد کے تفتیشی محمد منشانے عدالت کو آگاہ کیا کہ پولیس نے افتخار،قاسم،شہریاراورجاویدکے خلاف غریب لڑکیوں کو اغواکرکے جسم فروشی کروانے اورانھیں دبئی سمیت بیرون ملک فروخت کرنے کے الزام میںمقدمہ درج کررکھا ہے، ملزموں کے قبضہ سے فیصل آباد کی رہائشی ثناءنامی لڑکی پاسپورٹ سمیت برآمد کر لی گئی ہے جسے جسم فروشی کے لئے دبئی فروخت کیا گیا تھا،تفتیشی افسر نے عدالت کو مزید بتایا کہ ملزمان پہلے بھی پاکستان سے لڑکیاں اغواءکر کے ملائشیائ،سنگاپور اور دبئی بھجوا چکے ہیں۔عدالتی بیلف نے ملزموں کو عدالت میں پیش کیا،عدالت نے ریکارڈکاجائزہ لینے کے بعد ملزموں کی درخواست خارج کرتے ہوئے قرار دیا کہ ایسے جرائم پیشہ افرادمعاشرے کا کینسرہیں،جن کے ساتھ کوئی رعایت نہیں برتی جاسکتی،درخواست خارج ہونے کے بعد تھانہ صدرفیصل آبادکی پولیس نے چاروں ملزموں کوگرفتارکرنے کی کوشش کی تووکلاکے گروہ نے پولیس ٹیم کو تشددکانشانہ بناڈالااورچاروں ملزموں کو فرارکرادیا،عدالتی سکیورٹی پرماموراہلکاروں نے ایک ملزم افتخارکوہائیکورٹ کے داخلی دروازے پر گرفتارکرلیا۔

وکلائ،فرار

مزید : صفحہ آخر