پاکستان اور جرمنی کے درمیان تجارتی وفود کے تبادلوں کا سلسلہ جلد شروع ہو جائیگا

پاکستان اور جرمنی کے درمیان تجارتی وفود کے تبادلوں کا سلسلہ جلد شروع ہو ...

  

فیصل آباد (بیورورپورٹ) جرمن سفیر مس اینا لیپل نے کہا ہے کہ دوطرفہ تجارتی تعلقات بڑھانے کیلئے پاکستان اور جرمنی کے درمیان تجارتی وفود کے تبادلوں کا سلسلہ جلد شروع ہو جائیگا اور اس سلسلہ میں پاکستان کے وزیر تجارت غلام دستگیر کی قیادت میں پاکستانی وفد 2016 کے شروع میں جبکہ جرمنی کا تجارتی وفد اگلے سال کے وسط میں پاکستان کا دورہ کرے گا۔ وہ فیصل آباد چیمبر میں ایک تقریب سے خطاب کر رہی تھیں۔ انہوں نے کہا کہ جرمنی سیاسی اور معاشی طور پر عالمی برادری سے جڑا ہوا ہے پاکستان کے ساتھ بھی ہمارے تعلقات بہت اچھے ہیں تاہم معاشی تعلقات میں مزید اضافے کے وسیع امکانات ہیں اور اس سلسلہ میں دونوں ملکوں کے تاجروں کو اپنا بھرپور کردار ادا کرنا ہوگا۔ انہوں نے کہا کہ اس حوالے سے فیصل آباد چیمبر کو بھی اور زیادہ متحرک ہونا پڑے گا۔ توانائی کے حوالے سے انہوں نے کہا کہ جرمنی شمسی توانائی کے سلسلہ میں پاکستان کی کافی مدد کر سکتا ہے۔ اس وقت ایک کمپنی پاکستان میں کام بھی کر رہی ہے تاہم اس سلسلہ میں بعض ریگولیٹری معاملات میں جن کو حل کرنا ضروری ہے۔

اور ان میں سر فہرست مۂلہ پیدا کی جانے والی بجلی کو نیشنل گرڈ میں شامل کرنا ہے۔ مزید برآں ملک میں صنعت و تجارت کے فروغ کیلئے حالات کو مزید بہتر بنانے کی بھی ضرورت ہے ۔ پاک جرمن بزنس فورم ، جرمنی لینگویج انسٹیٹیوٹ اور اس طرح کے دیگر اداروں کی شاخیں فیصل آباد میں قائم کرنے کے حوالے سے جرمنی سفیر سے کہا کہ فیصل آباد کے تاجروں کو پاک جرمن بزنس فورم کا ممبر بن کر یہاں اس کی شاخ قائم کرنے کی راہ ہموار کرنی چاہیئے۔ جرمنی کے سفارتخانہ کے اکنامک سیکشن کے سربراہ مسٹرکائے مولر برنرنے کہا کہ تاجروں کا پہلا رابطہ ان کے سیکشن سے ہونا ہے اور وہ تاجروں سے ہر ممکن تعاون کر رہے ہیں تا ہم جہاں تک پاکستان جرمن بزنس فورم کا تعلق ہے اس کی ممبرشپ پاکستان کی تمام تاجر برادری کیلئے کھلی ہے۔ فیصل آباد چیمبر کے صدر چوہدری محمد نواز نے جرمن سفیر اور ہیڈ آف اکنامک سیکشن کا خیر مقدم کیا اور بتایا کہ فیصل آباد ملک کا تیسرا بڑا شہر ہے جس کو ٹیکسٹائل کی وجہ سے دنیا بھر میں شہرت حاصل ہے۔ انہوں نے بتایا کہ فیصل آباد چیمبر کے ممبران کی تعداد 5 ہزار سے زائد ہے جو صنعت و تجارت سے متعلق ہر شعبہ سے تعلق رکھتے ہیں جبکہ فیصل آباد چیمبر اس کے مسائل کے حل کیلئے ہمہ وقت کوشاں ہے۔ نائب صدر جمیل احمد نے پاک جرمن تعلقات کے حوالے سے بتایا کہ دونوں ملکوں کے درمیا ن دو طرفہ سیاسی ، سماجی ، سفارتی اور کلچرل تعلقات 1950 سے قائم ہیں۔ یورپین یونین کی بڑی معیشت ہونے کے ناطے جرمنی کا شمار پاکستان کے بڑے ٹریڈنگ پارٹنر کے طور پر ہوتا ہے۔ انہوں نے بتایا کہ 2014 میں پاک جرمن دو طرفہ تجارت 2.31 ارب ڈالر تھی ۔ پاکستان نے جرمنی کو 1.69 ارب ڈالر کی مصنوعات برآمد کیں جبکہ جرمنی کی درآمدات 1.02 ارب ڈالر رہیں۔ اس طرح تجارت کا توازن پاکستان کے حق میں رہا۔ انہوں نے مزید بتایا کہ دونوں ملکوں کے درمیان تجارتی حجم کو مزید بڑھانے کے وسیع امکانات ہیں اور اس سلسلہ میں فیصل آباد چیمبر اور پاکستان میں جرمن سفارتخانہ کو دونوں ملکوں کے تاجروں کے درمیان پل کا کردار ادا کرنا ہوگا۔ انہوں نے دونوں ملکوں کے درمیان تجارتی تعلقات کو بڑھانے کیلئے وفود کے تبادلوں اور سنگل کنٹری نمائشوں پربھی زور دیا۔ آخر میں سینئر نائب صدر سید ضیاء علمدار حسین نے کہا کہ جرمنی کے لوگ انتہائی قابل اعتبار ہیں اور پاکستان میں جرمنوں کو انتہائی قدر کی نگاہ سے دیکھا جاتا ہے۔ انہوں نے پاکستان کو جی ایس پی پلس کا درجہ دلانے کے سلسلہ میں جرمنی کی کوششوں اور کردار کو سراہا اور کہا کہ ہمیں توقع ہے کہ جرمنی جی ایس پی پلس کے درجہ کو برقراررکھنے کے سلسلہ میں یورپین یونین میں پاکستان کی بھرپور حمایت کرے گا۔ تقریب سے قبل صدر چیمبر چوہدری محمد نواز کی درخواست پر پیرس کے سانحہ میں ہلاک ہونے والوں کیلئے ایک منٹ کی خاموشی بھی اختیار کی گئی۔ آخر میں چیمبر کے سابق صدر انجینئر سہیل بن رشید نے جرمنی کی سفیر اینا لیپل کو چیمبر کی اعزازی شیلڈ پیش کی جبکہ سابق نائب صدر انعام افضل خان نے جرمن سفارتخانہ کے ہیڈ آف اکنامک سیکشن کائے مولر برنر کو چیمبر کی پن لگائی۔ معروف صنعتکار سلمان اسلم نے جرمن سفیر محترمہ اینا کو خصوصی تحائف بھی پیش کئے۔

مزید :

کامرس -