گلبرگ بینک ڈکیتی کے ملزمان گرفتار نہ ہو سکے ،ٹریکر کی مدد بھی رنگ نہ لائی

گلبرگ بینک ڈکیتی کے ملزمان گرفتار نہ ہو سکے ،ٹریکر کی مدد بھی رنگ نہ لائی

 لاہور(وقائع نگار)گلبرگ میں واقع نجی بینک میں ہونے والی رواں ماہ کی سب سے بڑی ڈکیتی کی واردات کے ملزمان کا سراغ لگانے میں پولیس تاحال ناکام۔جائے واردات سے چوری کی گئی گاڑی کو ٹریکر کی مدد سے تلاش کرنے کی کوششیں بھی رنگ نہ لاسکیں ۔پولیس نے حراست میں لیے گئے مشکوک افراد کے اہل خانہ کو بھی شامل تفتیش کرتے ہوئے تفتیش کا دائرہ کار وسیع کر دیا جبکہ ڈی آئی جی آپریشن نے میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے بتایا کہ تفتیش میں کافی کامیابیاں حاصل ہوئی ہیں ملزمان کے بہت نزدیک پہنچ چکے ہیں جلد ہی ملزمان قانون کی گرفت میں ہوں گے۔ وا ضح رہے کہ گلبرگ کے علا قہ حسین چو ک میں وا قع ایک نجی بنک میں دو ہفتے قبل شا م سوا سا ت بجے کے قر یب دو ڈا کو ؤں نے بنک کے سیکیو رٹی گا رڈ کی مدد سے بنک کے آپر یشنل منیجرمعظم اور کیشئر کو یر غما ل بنا کر بنک میں مو جو د کروڑ وں روپے کی ملکی وغیر ملکی کرنسی لو ٹ لی اور فرا ر ہو گئے یہ بنک ایس پی ماڈ ل ٹاؤن اور تھا نہ گلبر گ سے چند قد مو ں کے فا صلے پر وا قع ہے۔تھانہ گلبر گ میں 9 کروڑ 80 لاکھ 45 ہزار روپے اور گاڑی کی چوری کا مقدمہ درج کر لیا گیا تھا۔ ذرائع کے مطابق مقامی نجی بینک میں آپریشن منیجر معظم علی اور کیشئر سلمان طارق گزشتہ روز رات 7 بجے کیش کی پڑتال کر رہے تھے کہ سکیورٹی گارڈ اصغر نے 2مسلح ساتھیوں کے ہمراہ دھوکے سے دروازہ کھلو ایا اور ساتھیوں سے ملکر مذکورہ دونوں افسران کو باندھ دیا اور 9 کروڑ 80 لاکھ 45 ہزار روپے لوٹ لیے ملزمان جاتے ہو ئے گاڑی نمبر LEE\1083 بھی اپنے ساتھ لے گئے ۔ملزمان نے واردات کے دوران بجلی بندکرکے سی سی ٹی وی کیمرے بھی ناکارہ بنا دئے تھے۔واقع کے بعد پولیس نے بینک کے آپر یشنل منیجر معظم علی کی مدعیت میں سکیورٹی گارڈ اصغر اور اسکے 2 نامعلوم ساتھیوں کے خلاف مقدمہ درج کر لیا تھا لیکن دو ہفتوں سے زائد وقت گزر جانے کے باوجود ملزمان کا تا حال کوئی گرفتار نہیں مل سکا ہے۔

مزید : علاقائی