رینجرز آپریشن ، ایم کیو ایم کے 30کارکنان گرفتار ، رابطہ کمیٹی کا ہنگامی اجلاس جاری،کراچی بھر سےکارکن 90 طلب

رینجرز آپریشن ، ایم کیو ایم کے 30کارکنان گرفتار ، رابطہ کمیٹی کا ہنگامی ...
رینجرز آپریشن ، ایم کیو ایم کے 30کارکنان گرفتار ، رابطہ کمیٹی کا ہنگامی اجلاس جاری،کراچی بھر سےکارکن 90 طلب

  


کراچی (مانیٹرنگ ڈیسک )کراچی کے مختلف علاقوں میں رینجرز نے 24 گھنٹوں میں متحدہ قومی موومنٹ (ایم کیو ایم) کے خلاف کارروائیوں کے دوران سیکٹر انچارج سمیت 30 کارکنان کو گرفتار کرلیا ہے۔تفصیلات کے مطابق رینجرز نے کورنگی میں ایم کیو ایم کے سیکٹر آفس پر چھاپہ مارا۔ چھاپے کے دوران کورنگی سیکٹر کے انچارج وسیم شمع، سیکٹر ممبراصغریعقوب، یونٹ 75 کے جوائنٹ انچارج ندیم اختر،یونٹ 70کے انچارج رفیق شیخ، یونٹ 70 کے ممبر ابراہیم، جوائنٹ ممبر یونٹ 69 آصف اختر، یونٹ 73 کے ممبر شاہ زیب، یونٹ 71 کے انچارج وسیم بھائی، یونٹ 78 کے ممبر فیصل اور ان کے معاون بوبی سمیت ایم کیو ایم کے 20 کارکنان کو حراست میںلے کر نامعلوم مقام پر منتقل کردیا ہے۔ چھاپے کے دوران سیکٹر انچارج، فنانس سیکریٹری، بلدیاتی امیدوار سمیت کارکنوں کو گرفتار کیا گیا۔ علاوہ ازیں رینجرز نے پی آئی ڈی سی کے قریب ہجرت کالونی میں خفیہ اطلاع پر ایم کیو ایم کے یونٹ آفس پر چھاپہ مار کر 10 کارکنان کو حراست میں لے لیا۔ ذرائع کے مطابق حراست میں لئے گئے کارکنان کورنگی سے فرار ہو کر ہجرت کالونی میں ٹھہرے ہوئے تھے۔ گرفتار کئے گئے ملزمان کو تفتیش کے لئے نامعلوم مقام پر منتقل کردیا گیا۔ دوسری جانب رابطہ کمیٹی نے کراچی بھر کے کارکنان کو 90 پر طلب کرلیا ہے۔ 90 پر رابطہ کمیٹی اور لندن سیکٹر آفس کا اجلاس جاری ہے۔ ذرائع کے مطابق ایم کیو ایم کے رہنما ڈاکٹر فاروق ستار نے گرفتاریوں پر ڈی جی رینجرز سندھ میجر جنرل بلال اکبر سے ٹیلی فونک رابطہ کیا۔ ڈی جی رینجرز کا کہنا تھا کہ گرفتار کئے گئے جن افراد پر مقدمات نہیں ہوں گے ان کو رہا کردیا جائے گا۔ ڈاکٹر فاروق ستار پریس کانفرنس کرنے کے بعد کورنگی پہنچ گئے۔دنیا نیوز کے مطابق ایم کیو ایم کا کہنا ہے کہ گرفتاریاں بلدیاتی الیکشن میں حصہ لینے سے روکنے کی کوشش ہیں ۔ادھر ایم کیو ایم کے رہنمافاروق ستار نے ڈی جی رینجرزبلال اکبر سے ٹیلی فونک رابطہ کر کے رینجرز کی جانب سے کارکنوں کی گرفتاری پر تحفظات کا اظہار کیا ہے ۔

مزید : کراچی /اہم خبریں