پیپلز پارٹی کرپشن کی ماں ہے،فردوس شمیم نقوی

 پیپلز پارٹی کرپشن کی ماں ہے،فردوس شمیم نقوی

  



کراچی (اسٹاف رپورٹر) قائد حز ب اختلاف سندھ فردوس شمیم نقوی نے کہا ہے کہ پیپلز پارٹی سندھ کے 12 سالہ دور حکومت میں یہی کہتی آئی ہے کہ قومی اداراہ برائے امراض قلب سب سے بہترین طریقے سے چلایا جارہا ہے۔ قومی اداراہ برائے امراض قلب ایک بہترین ادارہ ہے جو عوام کی بہترین خدمت کررہا ہے لیکن  قومی ادارہ برائے امراض قلب (این آئی سی وی ڈی) کے حوالے سے بڑی کرپشن، بے ضابطگیاں اور رشوت خوری کے انکشافات ہوئے ہیں۔ افسوس کے ساتھ کہنا پڑتا ہے کہ جس چیز پر پیپلز پارٹی کا ہاتھ لگ جاتا ہے اس کے ساتھ ایک چیز بڑھ جاری ہے جسے کرپشن کہتے ہیں۔جسٹس گلزار کہتے ہیں کہ اس سے زیادہ کرپٹ صوبائی حکومت کوئی نہیں۔یہ باتیں انہوں نے اتوار کے روز پارٹی سیکریٹریٹ”انصاف ہاوس“ میں پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہیں۔ اس موقع پر ان کے ہمرا ہ اراکین سندھ اسمبلی ڈاکٹر عمران علی شاہ، ڈاکٹر سیما ضیاء، پی ٹی آئی رہنما شیراز علی اور طاہر ملک بھی موجود تھے۔فردوس شمیم نقوی نے مزید کہا کہ ادارے کے اندر این آئی سی وی ڈی ویلفیئر ٹرسٹ کے تعاون سے ایک بلڈنگ زیر تعمیر تھی جس کا کام 80فیصد مکمل ہوچکا تھا لیکن ادارے میں بے قائدگیوں کی وجہ سے انہوں نے بلڈنگ کے لئے فنڈنگ بند کردی۔وزیر اعلیٰ اور وزیر صحت کو ان معاملات کا علم ہے لیکن انہوں نے اسے ٹھیک کرنے کے لئے کوئی اقدامات نہیں کئے۔اس اسپتال کے آڈیٹر کی رپورٹ جب ہم نے دیکھی تو ہمیں معلوم ہوا کہ اس ادارے پر 7بلین واجبات ہیں لیکن۔اس وقت اسپتال کاخسارا10 بلین تک پہنچ گیا۔ انہوں نے مزید کہا کہ اسپتال کے لئے 5مشینوں کا ٹینڈر کیا گیا جبکہ12مشینیں خریدی گئیں۔اس ادارے کے سربراہ جن کا نام ندیم قمر جو کہ ایک سرکاری ملازم ہوتے ہوئے لیاری میں چیسٹ پین یونٹ کے افتتاح کے موقع پرجئے بھٹو کے نعرے لگاتے ہیں۔ایک سوال کے جواب میں ان کا کہنا تھا کہ سپریم کو رٹ نے یہ تین اسپتال وفاق کے حوالے کئے تھے جو کہ ہم نے واپس صوبے کو دے دیئے تھے۔ یہ اسپتال وفاق نے تحویل میں لینے کے لئے کچھ شرائط رکھی تھی جس میں فارنزگ آڈٹ اور دیگر چیزیں شامل تھی جو کہ نہیں کروائی گئی۔ ہم 18ویں ترمیم کے تحت صوبے کے اختیارات کی حمایت ضرور کرتے ہیں لیکن ہم چاہتے ہیں کہ ایجوکیشن، ہیلتھ اور لیبر کی پالیسی بنانے کی ذمہ داری وفاق کے پاس ہونی چاہئے۔ 

مزید : راولپنڈی صفحہ آخر