22 سالہ حرا کا قاتل بہنوئی پولیس کے حوالے لیکن دراصل کونسی خواہش پوری نہ ہونے پر سنگین قدم اٹھایا؟ عدالت میں بتادیا

22 سالہ حرا کا قاتل بہنوئی پولیس کے حوالے لیکن دراصل کونسی خواہش پوری نہ ہونے ...
22 سالہ حرا کا قاتل بہنوئی پولیس کے حوالے لیکن دراصل کونسی خواہش پوری نہ ہونے پر سنگین قدم اٹھایا؟ عدالت میں بتادیا

  



لاہور(ویب ڈیسک) لاہور میں شادی سے تین روز قبل قتل ہونے والی حرا کے قاتل بہنوئی نے قتل کی وجوہات بتا دیں۔لاہور میں قتل ہونے والی 24 سالہ حرا کے قاتل بہنوئی کو گزشتہ روز ماڈل ٹائون کچہری میں فاطمہ قیم کی عدالت میں پیش کیا گیا جہاں عدالت نے ملزم کو 4 روزہ جسمانی ریمانڈ پر پولیس کے حوالے کر دیا۔

پولیس نے عدالت میں انکشاف کیا کہ ملزم احسن اپنی سالی حرا کو پسند کرتا تھا اور اس سے شادی کا خواہشمند تھا، ملزم نے مقتولہ کو زبردستی اپنے ساتھ لے جانے کا اصرار کیا تھا لیکن لڑکی کے انکار پر اسے فائرنگ کر کے قتل کر دیا۔واضح رہے کہ ملزم احسن نے گزشتہ ہفتے جمعرات کو اپنی سالی کو اس وقت فائرنگ کر کے قتل کر دیا تھا جب وہ تیار ہونے کے لیے بیوٹی پارلر جا رہی تھی۔ حرا کی آج رخصتی ہونا تھا۔

پولیس نے گزشتہ روز ملزم کو ایمن آباد ضلع گوجرانوالہ سے گرفتار کر کے آلہ قتل برآمد کیا تھا۔ پولیس کا کہنا تھا کہ ملزم کو ٹیلی فون کالز ریکارڈ اور لوکیشن کی مدد سے حراست میں لیا گیا۔ذرائع کے مطابق پولیس نے مقتولہ کے فون کی مدد سے دو قریبی رشتہ داروں کو حراست میں لے لیا تھا۔ دوران تفتیش ملزم احسن نے حرا کو قتل کرنے کا اعتراف کر لیا ہے۔ گرفتار ملزم احسن مقتولہ کا بہنوئی ہے۔ذرائع کا کہنا ہے کہ قتل سے کچھ دیر قبل حرا نے دونوں کے ساتھ طویل گفتگو کی تھی اور تینوں نے آپس میں ٹکسٹ میسیجز بھی کیے تھے۔

مزید : علاقائی /پنجاب /لاہور