’مشرف دور میں میری اہلیہ کا آپریشن ہوا تو ساتھ والے کمرے میں اعجاز شاہ تھے ،مشرف اپنے دوست کی عیادت کیلئے آئے تو ہمیں وہاں سے نکال دیا گیا‘

’مشرف دور میں میری اہلیہ کا آپریشن ہوا تو ساتھ والے کمرے میں اعجاز شاہ تھے ...
’مشرف دور میں میری اہلیہ کا آپریشن ہوا تو ساتھ والے کمرے میں اعجاز شاہ تھے ،مشرف اپنے دوست کی عیادت کیلئے آئے تو ہمیں وہاں سے نکال دیا گیا‘

  



اسلام آباد (ڈیلی پاکستان آن لائن)سینئر قانون دان اکرم شیخ نے کہاہے کہ مشرف اور بریگیڈیئر (ر)اعجاز شاہ میں بڑی دوستی تھی جب ہسپتال میں میری اہلیہ کا آپریشن ہوا تو ساتھ والے کمرے میں بریگیڈیئر اعجاز شاہ کی سرجری ہوئی تھی ، مشرف کی آمد پر ہمیں کمرے سے شفٹ کردیاگیا ۔

جیونیوز کے پروگرام ”آج شاہ زیب خانزادہ کے ساتھ“میں گفتگو کرتے ہوئے اکرم شیخ نے کہا کہ عمران خان کے حکومت میں آنے کے بعد جب میں نے دیکھا کہ فروغ نسیم اور انور منصور خان جوپرویز مشرف کے دفاع میں دلائل دیتے رہے ہیں اہم پوزیشنز پر آگئے ہیں تومیں نے سنگین غداری کیس سے الگ ہوگیا اور پراسیکیوشن ٹیم سے استعفیٰ دیدیا ۔ انہوں نے کہاکہ فروغ نسیم نے  کیس میں ایک ایک گواہ پر جرح کی تھی ۔میں نے اس کیس میں ایک پیسہ بھی نہیں لیا ، حکومت اس بات کی جس طرح چاہے تصدیق کرسکتی ہے ۔

اکرم شیخ کا کہنا تھاکہ اس فیصلے کے خلاف سپریم کورٹ میں اپیل ہوگی ، حکومت کوڈیڑھ سال سے نہیں پتہ تھا کہ قانونی ٹیم بدل گئی ہے ۔ انہوںنے کہا کہ میر ی اہلیہ ہسپتال میں داخل تھیں اور ساتھ والے کمرے میں بریگیڈیئر اعجاز شاہ کی سرجری ہوئی ، ہم کواس کمرے سے شفٹ کیاگیا کیونکہ پرویز مشرف نے ان کی عیادت کیلئے آنا تھا ، پرویز مشرف اور بریگیڈیئر (ر) اعجاز شاہ کی بڑی دوستی تھی۔

مزید : قومی