دبئی ایکسپو……ذہنی ہم آہنگی کے ذریعے مستقبل کی تعبیر!

دبئی ایکسپو……ذہنی ہم آہنگی کے ذریعے مستقبل کی تعبیر!

  

صنعتی ترقی کا عمل تیز کر کے روزگار کے مواقع بڑھانا وزیر اعظم عمران خان کا ویژن ہے اور پنجاب کے وزیر اعلیٰ عثمان بزدار وزیر اعظم کے ویژن کو حقیقت کا روپ دینے اور صنعتکاری کی رفتار میں تیزی لانے کے لئے متحرک کردار ادا کررہے ہیں۔ صوبے میں 10سپیشل اکنامک زونز،23سمال انڈسٹریل اسٹیٹس اور دیگر صنعتی مراکز میں نئی سرمایہ کاری لانے کے لئے صوبائی وزیر صنعت وتجارت میاں اسلم اقبال کی قیادت میں ٹیم کی شب روز کی محنت رنگ لارہی ہے اور گزشتہ تین سالوں میں 300ارب روپے سے زائد کی سرمایہ کاری آچکی ہے۔

پنجاب حکومت نے پہلی بار عالمی تجارتی میلے دبئی ایکسپو میں بھر پور شرکت کا فیصلہ کیا اور پنجاب کے 20محکمے اس ایونٹ میں حصہ لے رہے ہیں جس سے پنجاب میں عالمی سرمایہ کاری کو فروغ ملے گا۔ وزیر اعلیٰ پنجاب کی ہدایت پر انٹرنیشنل فنانشیل سٹی دبئی میں پنجاب سرمایہ کاری بورڈ کے زیر اہتمام انٹرنیشنل بزنس کانفرنس کا انعقاد کیا گیا اور اس کانفرنس کے دوران عالمی شہرت کی حامل سرمایہ کار کمپنیوں کے ساتھ 20معاہدے طے ہوئے۔ طے پانے والے ان معاہدوں پر عمل درآمد سے پنجاب میں 45ارب روپے کی نئی سرمایہ کاری آئے گی۔ جس سے روزگار کے ہزاروں نئے مواقع پیدا ہونگے۔بزنس کانفرنس کے دوران ہونے والے معاہدوں پر عملدرآمد کے لئے وزیراعلیٰ آفس میں خصوصی سیل بنے گا اور سب کمیٹیاں تشکیل دے کر معاہدوں کو تیزرفتاری سے آگے بڑھایا جائے گا۔ دبئی ایکسپو کے دوران جن کمپنیوں سے معاہدے کئے گئے ان میں ملائشین گرین ٹیک، پاکستان موبائل کمیونیکیشن لمیٹڈ، آئی ایم جی ورلڈ انٹرنیشنل، پراجیکٹ مینجمنٹ سائنسز لمیٹڈ، ڈریم ورلڈ لمیٹڈ کمپنی، سسٹین ایبل سٹی راوی انویسٹمنٹ لمیٹیڈ، نوکیا، پاک بزنس کونسل، پاکستان اوورسیز کمیونٹی، ایلوکوزے گروپ آف کمپنیز، انٹرنیشنل پیکنگ فلمز، رومی فیبرک لمیٹڈ، میسرا ٹریڈنگ ود نیشنل فروٹ پروسیسنگ، وقار انٹرنیشنل ٹیکنالوجی دبئی، گاوا ہولڈنگ، اکنامیکل اینڈ انرجی، کنسٹرکشن کنسٹرکشن سسمز کمپنی لمیٹڈ اور ویلمیٹ انویسٹمنٹ یو اے ای شامل ہیں۔ صوبائی وزیر صنعت وتجارت میاں اسلم اقبال نے وزیر اعلیٰ پنجاب کی طرف سے انٹرنیشنل بزنس کانفرنس کی میزبانی کے فرائض سر انجام دیئے۔ جبکہ صوبائی وزراء ہاشم جواں بخت، راجہ یاسر ہمایوں، متحدہ عرب امارات میں پاکستان کے سفیر افضال محمود، مشیر سیاحت آصف محمود، سی ای او پنجاب سرمایہ کاری بورڈ ڈاکٹر ارفع اقبال کے علاوہ ملکی اور غیر ملکی سرمایہ کاروں کی بڑی تعداد نے اس کانفرنس میں شرکت کی۔ صوبائی وزیرصنعت و تجارت میاں اسلم اقبال نے بزنس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ پنجاب حکومت نے سرمایہ کاروں کی سہولت کے لئے خصوصی سرمایہ کاری پورٹل متعارف کرایا ہے جبکہ متحدہ عرب امارات کے سرمایہ کاروں کی سہولت کے لئے یو اے ای میں ہیلپ ڈیسک کا قیام عمل میں لایا جا رہا ہے۔ ان کا یہ کہنا بھی درست ہے کہ عالمی سرمایہ کاروں کی پنجاب میں سرمایہ کاری میں دلچسپی حکومتی پالیسیوں پر اعتماد کا اظہار ہے۔ صوبائی وزیرخزانہ ہاشم جواں بخت نے بزنس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ پنجاب ایشیا کا مستقبل کا سرمایہ کاری کا ہب بننے جا رہا ہے اور دوبئی ایکسپو میں پنجاب حکومت کی بھرپور شرکت سے پنجاب میں سرمایہ کاری کی نئی راہیں کھلی ہیں۔ 

دبئی ایکسپو دنیا کا سب سے بڑا ایونٹ ہے جو متحدہ عرب امارات میں جاری ہے اور یہ ایونٹ 31مارچ 2022ء تک جاری رہے گا جس میں دنیا کے 192ممالک حصہ لے رہے ہیں۔ لندن میں 1851ء میں اس نوعیت کا پہلا عالمی اور تجارتی میلہ منعقد ہوا تھا اور اس کے بعد سے ہر 5سال بعد مختلف ممالک میں اس کا انعقاد کیا جارہا ہے۔ عالمی سطح پر ایسے میلوں اور نمائشوں کا انعقاد زیادہ تر یورپ اور امریکہ میں ہوتا ہے تاہم یہ پہلا موقع ہے کہ مشرق وسطیٰ میں اس نوعیت کی کوئی عالمی نمائش منعقد کی جارہی ہے۔ دوبئی ایکسپو 2020ء کو گزشتہ سال منعقد ہونا تھا لیکن کورونا وائرس کی عالمی وباء کے باعث سفری اور اجتماع پر عائد پابندیوں کی وجہ سے اسے موخر کیا گیا اور بالاآخر رواں سال ماہ اکتوبر میں اپنی نوعیت کے اس پہلے بڑے تجارتی و ثقافتی میلے کا آغاز کر دیا گیا۔ ایک اندازے کے مطابق 6ماہ تک جاری رہنے والے اس میلے میں اڑھائی کروڑ سے زائد کاروبار ی نمائندے اور سیاح اس میں شرکت کر رہے ہیں۔ اس عالمی ایونٹ میں شرکت کرنے والے ممالک کے الگ الگ پویلین بنائے گئے ہیں اور ہر ملک کے پویلین کو سجانے اور نمایاں کرنے کے لئے خاص اہتمام کیا گیا ہے۔ یہ امر خوش آئند ہے کہ دوبئی ایکسپو میں پاکستان پویلین دنیا کی توجہ کا مرکز بن گیا ہے اور کاروباری افراد بڑی تعداد میں اس میں شرکت کررہے ہیں اور یہ سب سے زیادہ دیکھے جانے والے پویلین میں سے ایک بن چکا ہے۔ روزانہ ہزاروں کی تعداد میں لوگ پاکستان پویلین میں آ رہے ہیں۔ دوبئی ایکسپو کے انعقاد کا مقصد خوشحال مستقبل کے حصول کے لئے باہمی تعاون، رواداری،بقائے باہمی اور سرمایہ کاری کا فروغ ہے اور یہ ایونٹ دنیا کے ممالک کے درمیان شراکت داری قائم کرے گا۔ ایسے عالمی میلے عوام کے درمیان خیالات کے تبادلے، ایجادات کو متعارف کرانے، مقامی ثقافت کے فروغ اور تجارتی تعلقات استوار کرنے کے مواقع فراہم کرتے ہیں۔ ایک صدی سے زیادہ عرصہ سے جاری عالمی نمائش کی اس روایت نے دنیا کو کئی اہم ترین ایجادات سے بھی متعارف کرایا ہے۔ سردارعثمان بزدار نے وزیر صنعت وتجارت میاں اسلم اقبال کی سربراہی میں ایک سٹیئرنگ کمیٹی تشکیل دی اور پنجاب سرمایہ کاری بورڈ کو اس ایونٹ میں شرکت کے انتظامات کو حتمی شکل دینے کے لئے فوکل ادارہ مقررہ کر دیا۔ سٹیئرنگ کمیٹی کے اجلاس باقاعدگی سے منعقد ہوئے اور دوبئی ایکسپو میں پنجاب کی بھر پور شرکت کو یقینی بنانے کے لئے انتظامات کو حتمی شکل دی گئی۔ پنجاب سرمایہ کاری بورڈ کی چیف ایگزیکٹو آفیسر ڈاکٹر ارفع اقبال اور ایک محنتی افسر جن کی شب روز کی محنت سے پنجاب حکومت کی دوبئی ایکسپو میں شرکت کے انتظامات مکمل کیے گئے۔ اس عالمی نمائش میں پنجاب کے 40 محکموں میں سے 20سرکاری محکموں کا انتخاب کیا گیا جن میں معدنیات، توانائی، تعلیم، پنجاب انفارمیشن ٹیکنالوجیِ اور دیگر محکمے شامل ہیں۔ شنگھائی ایکسپو 2013ء میں پاکستان نے حصہ لیا تاہم اس مرتبہ بہتر انداز میں پاکستان کے کلچر کو اجاگر کیا جا رہا ہے۔ دوبئی ایکسپو کے ذریعے پنجاب میں سرمایہ کاری کے مواقع اور کاروبارمیں آسانیاں پیدا کرنے کے لئے اٹھائے گئے اقدامات سے عالمی سرمایہ کاروں کو آگاہی دی جا رہی ہے۔پنجاب کے مختلف سیکٹرز میں سرمایہ کاری کے مواقعوں کو دستاویزی فلموں، مباحثوں اور سیمینارز کے ذریعے اجاگر کیا جا رہا ہے۔ یوم اقبال کے موقع پر دبئی ایکسپو میں خصوصی تقریب منعقد ہوئی جس میں مفکرِ پاکستان علامہ اقبال کو زبردست انداز میں خراج عقیدت پیش کیا گیا۔ ابتدائی طور پر دبئی ایکسپو میں 20سیمینارز کے انعقاد کا فیصلہ کیا گیا تھا تاہم اب 40سیمینارز منعقد کئے جا رہے ہیں۔ دبئی ایکسپو میں سرمایہ کاروں کو راغب کرنے کیلئے ”پنجاب ایز“ کے درو ازے عالمی برادری کے لئے بھی کھل گئے ہیں۔ یہ امر بھی خوش آئند ہے کہ دبئی ایکسپو میں ایس ایم ایز اور سٹارٹ اپس پر خصوصی توجہ فوکس کی گئی ہے۔ پاکستان میں انفارمیشن اینڈ کمیونیکیشن ٹیکنالوجیز (ICT) کے فروغ میں پنجاب کا کردار انتہائی اہم ہے۔ اس ضمن میں پنجاب انفارمیشن ٹیکنالوجی بورڈ کے وضع کردہ سٹارٹ اپس پنجاب پورٹل کے ذریعے منتخب کردہ سٹارٹ اپس نے پنجاب کی نمائندگی کی۔ بزنس کانفرنس میں پنجاب انفارمیشن ٹیکنالوجی بورڈ نے انٹرپرینور شپ اور سرمایہ کاری کے فروغ کیلئے پاکستان بزنس کونسل دبئی اور پاکستان اوورسیز کمیونٹی گلوبل کیساتھ دو مفاہمتی یادداشتوں پر دستخط کئے۔ پنجاب انٹرنیشنل بزنس کانفرنس کے دوران پی آئی ٹی بی کے وضع کردہ سٹارٹ اپ پنجاب پورٹل کا بھی افتتاح کیا گیا جبکہ پنجاب کے 20منتخب سٹارٹ اپس نے منفرد آئیڈیاز عالمی سرمایہ کاروں کے سامنے پیش کئے۔ عالمی سرمایہ کاروں نے صوبائی وزیر راجہ یاسر‘ چیئرمین اظفر منظور اور سٹارٹ اپس سے ملاقات میں سٹارٹ اپس کے بزنس آئیڈیاز اور معیار کو سراہا اور تعاون میں گہری دلچسپی ظاہر کی۔اس موقع پر راجہ یاسر ہمایوں نے کہا کہ دبئی ایکسپو میں پنجاب کے سٹارٹ اپس کو ٹیکنالوجی پر مبنی سروسز اور آئیڈیاز کو بہترین انداز میں پیش کرنے کا موقع ملا جبکہ پورٹل سے سٹارٹ اپس اور بین الاقوامی اسٹیک ہولڈرز کے درمیان روابط کے قیام اورآئی سی ٹی انڈسٹری کے فروغ میں مدد ملی۔ راجہ یاسر ہمایوں نے کہا کہ دبئی ایکسپو میں پنجاب کی نمائندگی کے حوالے سے پی آئی ٹی بی کا کردار قابل تحسین ہے۔ چیئرمین پی آئی ٹی بی اظفر منظور نے کہا کہ پی آئی ٹی بی انٹرپرینور شپ کے فروغ کیلئے جدت پر مبنی متعدد منصوبوں پر عمل پیرا ہے۔ اس سے نوجوانوں کو روزگار کے حصول میں مدد ملی ہے اور وہ گھر بیٹھے زرمبادلہ کما رہے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ دبئی میں شرکت کا مقصد اپنے آئی سی ٹی سیکٹر کو دنیا کے سامنے متعارف کروانا ہے تاکہ پنجاب میں سرمایہ کاری اور ٹیکنالوجی کو فروغ حاصل ہو سکے۔پنجاب کے 20 سٹارٹ اپس دبئی ایکسپو میں 28نومبر تک اپنے منفرد کاروباری آئیڈیاز عالمی سرمایہ کاروں کے سامنے پیش کر رہے ہیں۔ایونٹ میں شرکا کو پنجاب میں آئی ٹی کے فروغ کے حوالے سے پی آئی ٹی بی کی وضع کردہ ڈاکومنٹری بھی دکھائی گئی اور پینل ڈسکشن کا بھی اہتمام کیا گیا جس میں منسٹر راجہ یاسر ہمایوں‘ چیئرمین پی آئی ٹی بی‘چیئرمین پاشا بدر خوشنود‘سی ای او انفوٹیک نصیر اختر‘ مینیجنگ ڈائریکٹر IBEX ندیم الٰہی‘مینیجنگ پارٹنر گلوبل سیمی کنڈکٹر گروپ اور دیگر انڈسٹری ایکسپرٹس شامل تھے۔

پنجاب میں انٹرپرینیورشپ ایکوسسٹم کے فروغ کیلئے پنجاب آئی ٹی بورڈ‘ پنجاب بورڈ آف انویسٹمنٹ اینڈ ٹریڈ اور TEVTA کے اشتراک سے وضع کردہ سٹارٹ اپ پنجاب پورٹل پر سٹارٹ اپس کی رجسٹریشن کا آغاز یکم اکتوبر کو کر دیا گیا تھا۔ یکم اکتوبر کو ارفع ٹاور میں منعقدہ تقریب میں چیئرمین پی آئی ٹی بی اظفر منظور‘چیف آپریٹنگ آفیسر TEVTA رائے منظور ناصر‘سی ای او پنجاب بورڈ آف انویسٹمنٹ اینڈ ٹریڈ ڈاکٹر ارفع اقبال‘ڈی جی ای گورننس پی آئی ٹی بی ساجد لطیف‘اے ڈی جی پی آئی ٹی بی صائمہ شیخ و دیگر سینئر افسران شریک ہوئے۔ رجسٹریشن کیلئے سٹارٹ اپس کو 7اکتوبر تک سٹارٹ اپ پنجاب پورٹل پر آن لائن اپلائی کرنے کی ڈیڈ لائن دی گئی تھی۔اس طرح 20منتخب سٹارٹ اپس کو دبئی ایکسپو میں شریک ہونے اور اپنی سروسز اور آئیڈیاز کو دنیا کے سامنے پیش کرنے کا موقع ملا۔سٹارٹ اپس نے startup.punjab.gov.pk  پورٹل کے ذریعے رجسٹریشن کرائی۔راجہ یاسر نے کہا کہ سٹارٹ اپس پنجاب پورٹل سے پنجاب کے نوجوانوں کو عالمی سطح پر اپنی خدمات فراہم کرنے کا موقع ملا ہے۔ انہوں نے کہا کہ کل 311 سٹارٹ اپس نے پورٹل پرآن لائن درخواستیں بھیجیں جن میں سے 20 سٹارٹ اپس کو دبئی میں شرکت کیلئے منتخب کیا گیا۔ آئی ٹی انڈسٹری کے تجربہ کار ماہرین نے سٹارٹ اپس کا انتخاب غیرجانبدارانہ انداز میں کیا۔راجہ یاسر کا کہنا تھا کہ سٹارٹ اپس نے عالمی سرمایہ کاروں کے سامنے اپنے آئیڈیاز پیش کئے جنہیں بہت زیادہ سراہا گیا۔پنجاب کے سٹارٹ اپس کی ترویج کیلئے دبئی کی تنظیموں کے ساتھ معاہدے بھی کیے گئے۔

دبئی ایکسپو میں جن دو اہم یادداشتوں پر دستخط کئے گے ان کے مطابق پہلی مفاہمتی یادداشت پاکستان بزنس کونسل دبئی کے ساتھ طے پائی جو ایک غیر منافع بخش تنظیم ہے اور دبئی چیمبر آف کامرس اینڈ انڈسٹری یو اے ای کی سرپرستی میں کام کر رہی ہے۔ دوسری مفاہمتی یادداشت پاکستان اوورسیز کمیونٹی گلوبل کے ساتھ طے پائی جس کا مرکزی سیکرٹریٹ لندن، برطانیہ میں ہے۔یہ ادارہ دنیا میں سمندر پار پاکستانیوں کی نمائندگی کرتا ہے۔ایم او یوز پر چیئرمین پی آئی ٹی بی اظفر منظور نے دستخط کیے جبکہ وزیر برائے آئی ٹی اور ہائر ایجوکیشن پنجاب راجہ یاسر ہمایوں، وزیر خزانہ پنجاب ہاشم جواں بخت، وزیر صنعت و تجارت پنجاب میاں اسلم اقبال اور ڈی جی پی آئی ٹی بی ساجد لطیف بھی ان کے ہمراہ تھے۔ دبئی ایکسپو 2020 میں سٹارٹ اپ پنجاب پورٹل کے ذریعے منتخب ہونے والے پاکستانی سٹارٹ اپس نے عالمی سطح پر بہت زیادہ توجہ حاصل کی۔ اس موقع پر متحدہ عرب امارات کے ممکنہ سرمایہ کاروں نے وزیر آئی ٹی اور ہائر ایجوکیشن پنجاب راجہ یاسر ہمایوں، چیئرمین پی آئی ٹی بی اظفر منظور اور پنجاب کے سٹارٹ اپس سے ملاقات کی اور ان کی سروسز میں گہری دلچسپی ظاہر کی۔ دبئی ایکسپو میں پنجاب کے دستکار بھی اپنے فن کا مظاہرہ کر رہے ہیں۔ پاکستان پویلین میں آنے والے پاکستان کے دستکاروں کے ہینڈی کرافٹس میں گہری دلچسپی لے رہے ہیں۔ پنجاب کی قدیم تہذیبوں اور زرخیز زمینوں کی تاریخ اور پنجاب کے مختلف شعبوں میں سرمایہ کاری کے مواقعوں کو دستاویزی فلموں کے ذریعے اجاگر کیا جا رہا ہے۔ نمائش دیکھنے کے لئے آنے والوں کو پنجاب کے ثقافتی ورثے اور رنگ دیکھنے کا موقع مل رہا ہے۔ دبئی ایکسپو کے دوران حکومت نے پاکستات ایسوسی ایشن دبئی کے اراکین، پاکستان بزنس کونسل دبئی، مالیات و تعمیرات، صنعت اور رئیل اسٹیٹ سیکٹر کے پاکستانی بزنس مینوں کیساتھ مکالمے جاری ہیں اور انہیں پنجاب میں سرمایہ کاری کے مواقع سے آگاہی دی جا رہی ہے۔ کاروبار میں آسانیاں پیدا کرنے کے اقدامات اور ملکی و غیر ملکی سرمایہ کاروں کو دی جانے والی سہولتوں سے بھی آگاہ کیا جا رہا ہے۔ دبئی ایکسپو کے ذریعے لوکل ایس ایم ایز کے عالمی سرمایہ کاروں کے ساتھ روابط بڑھیں گے۔ دوبئی ایکسپو کے ذریعے پنجاب اور پاکستان کا نیا چہرہ دنیا کے سامنے آیا ہے۔ سیمینارز، مکالمے اور ثقافتی نمائشیں پاکستان کے سافٹ امیج کو اجاگر کر رہی ہیں۔ 

پنجاب سرمایہ کاری بورڈ کے اس انقلابی اقدام سے عالمی سرمایہ کاروں کے لئے پنجاب میں سرمایہ کاری کے دروازے کھل جائیں گے۔ بلاشبہ ”پنجاب ایز“ کا اجراء سرمایہ کار دوست ماحول اور کاروبار میں آسانی کے لئے ایک اورانقلابی اقدام ہے۔ دوبئی ایکسپو کے مرکز ی خیال”ذہنی ہم آھنگی کے ذریعے مستقبل کی تعبیر“ کے مطابق نہ صرف دنیا کو پنجاب میں سرمایہ کاری کے لئے موجود مواقع سے روشناس کرایا گیا ہے بلکہ شراکت داری اور اس کے ذریعے بہتر مستقبل کی تعمیر کے خواب کو شرمندہ تعمیر کرنے کے لئے درجنوں سیمینارز، مزاکراتی نشستیں اور کاروباری فورم اہم کردار ادا کریں گے۔ دبئی ایکسپو کے دوران پنجاب حکومت نے دنیا بھر سے آنے والوں کو پنجاب میں موجود سیاحت کے مواقعوں قدیم ثقافتوں کے نشانات، پاکستان میں شجرکاری مہم، شمسی توانائی اور ماحولیاتی بچاؤ کے منصوبوں سے روشناس کرانے کے حوالے سے مثبت پیشرفت کی ہے۔ 

٭٭٭

پنجاب کے 20محکموں کی دبئی عالمی ایونٹ میں بھر پور شرکت خوش آئند ہے

ایسے عالمی میلے عوام کے درمیان خیالات کے تبادلے، ایجادات کو متعارف کرانے،

 مقامی ثقافت کے فروغ اور تجارتی تعلقات استوار کرنے کے مواقع فراہم کرتے ہیں 

 نمائش کے شرکاء کو پنجاب کے ثقافتی ورثے اور 

رنگ دیکھنے کا موقع مل رہا ہے

مزید :

ایڈیشن 1 -