وفاقی محتسب نے رواں سال کی کارکردگی رپورٹ جاری کر دی 

      وفاقی محتسب نے رواں سال کی کارکردگی رپورٹ جاری کر دی 

  

پشاور(سٹی رپورٹر) وفاقی محتسب سیکرٹریٹ نے رواں سال کی کارکردگی رپورٹ جاری کر دی۔  سال 2020 میں انصاف کے حصول کے لئے وفاقی محتسب سیکرٹریٹ میں وفاقی اداروں کے خلا ف ایک لا کھ 33 ہزار 521 شکا یات درج ہو ئیں، جن میں سے ایک لا کھ 30 ہزار 112 شکایات کے فیصلے کئے گئے، سیکر ٹر یٹ کے قیام سے لے کر اب تک کی 38 سالہ تا ریخ میں کسی ایک سال میں یہ سب سے زیا دہ شکا یات اور سب سے زیا دہ فیصلے ہیں۔وفاقی محتسب کا ادارہ اسلا م آباد 1983  سے کام کر رہا ہے، چاروں صو بوں اور مختلف شہروں میں قا ئم13 علاقائی دفا تر بھی جلد انصا ف فرا ہم کر نے اور و فاقی حکو مت کے دو سو سے زائد اداروں کی بدانتظا می، نا اہلی اور کاہلی کے سبب عام افراد سے ہو نے والی ناانصافیوں کے خلا ف شکایات کا ازالہ کر نے میں شب وروز کو شا ں ہیں۔ اسے ایشیا  میں پہلا ادارہ ہو نے کا اعزاز بھی حا صل ہے۔یہاں وکیل کی ضرورت ہے نہ فیس کی، نہ ہی کسی اور نو عیت کے اخراجات کی۔شکا یت کنندہ سادہ کا غذ پر بذ ریعہ ڈاک یا آن لائن درخواست دے سکتا ہے، جس پر 24 گھنٹوں کے اندر کارروائی شروع ہو جا تی ہے اور زیادہ سے زیا دہ 60 دن کے اندر ہر شکا یت کا فیصلہ کر دیا جا تا ہے۔ وفاقی محتسب کے فیصلوں کے بعد شعبہ  عمل درآ مد(Implementation Wing) کی طر ف سے ان فیصلوں پر عمل درآمد کی با قا عدہ نگرا نی کی گئی جس کے با عث فیصلوں پر عمل درآمد کی شرح99.6 فیصد رہی جب کہ فیصلوں پر نظر ثا نی اور صدر پا کستان کو اپیلوں کی شر ح 0.24 فیصدسے بھی کم رہی۔ رواں سال2021  بھی کورونا کے سبب دفا تر میں کام متا ثر ہو نے کے با وجود وفاقی محتسب سیدطاہر شہباز کی طر ف سے متعارف کر ائی گئی نئی حکمت عملی اور جد ید ٹیکنا لو جی کے بھر پور استعمال کے با عث اب تک یعنی گز شتہ10 ماہ کے دوران90 ہزار سے زائد شکا یات رجسٹر ڈ ہو چکی ہیں جن میں سے 84ہزار سے زائد کے فیصلے کئے جا چکے ہیں جبکہ بقا یا شکا یات پر کا رروائی جا ری ہے۔ ان میں سے18315  شکایات آن لائن (ویب سائٹ، مو با ئل ایپ) کے ذریعے جب کہ 12492مر بوط کمپیو ٹر ائزڈ نظام کے تحت موصول ہو ئیں۔ واضح رہے کہ وفاقی محتسب نے اس مر بوط کمپیو ٹر ائز ڈ نظام کے تحت وفاقی حکومت کے تمام اداروں کو اپنے کمپیو ٹر ائز ڈ نظام کے ساتھ منسلک کر نے کی ہدا یت کر رکھی ہے۔ اب تک 188 سے زائد وفاقی اداروں کو اس نظام کے ساتھ منسلک کیا جا چکا ہے جبکہ با قی اداروں کو بھی منسلک کیا جارہا ہے۔اس نظام کے تحت کسی بھی وفاقی ادارے میں مو صول ہونے والی شکا یت اگر 30 دن کے اندر حل نہ ہو تو وہ ایک خود کار نظام کے تحت وفاقی محتسب سیکر ٹر یٹ کے سسٹم میں منتقل ہو جا تی ہے اور اس پر یہاں کارروائی شر وع ہو جا تی ہے۔زیا دہ ترشکایات بجلی تقسیم کر نے والی کمپنیوں اور سو ئی گیس کے علا وہ، نادرا، پا کستان پوسٹ، علا مہ اقبال اوپن یونیو رسٹی، پاکستان بیت المال، پا کستان ریلوے، پا کستان پوسٹ، اسٹیٹ لا ئف انشو رنس، بے نظیر انکم سپورٹ پروگرام(احساس) اور ای او آئی بی کے خلا ف آئیں جن میں سے اکثر شکا یات پر فریقین کی رضا مندی سے عمل درآمد بھی ہو گیا۔وفاقی محتسب نے شکایت کنند گان کو ان کے گھر کے قر یب انصاف فرا ہم کر نے کے لئے Outreah Complaint Resolution کے نام سے ایک پروگرام شروع کر رکھا ہے جس کے تحت وفاقی محتسب کے تفتیشی افسران خود تحصیل اور ضلعی ہیڈ کوا رٹرز جا کر عوام النا س کو ان کے گھر وں کے قر یب مفت اور فوری انصاف فراہم کررہے ہیں۔ اس پروگرام کے تحت اب تک اس سال6360 شکا یات کا ازالہ کیا جا چکا ہے۔بیرو نی مما لک میں مقیم 95 لا کھ سے زائد پا کستا نیوں کے مسا ئل کے حل کے لئے وفاقی محتسب سیکر ٹر یٹ میں سہو لیا تی کمشنر برا ئے اوورسیز پا کستا نیز کے نام سے ایک شعبہ الگ سے بھی کام کر رہا ہے جس کی رپورٹ کے مطا بق بیرونی مما لک میں قا ئم پا کستانی مشنز اور سفارتخانوں نے گز شتہ10 ماہ میں بیرون ملک مقیم پا کستا نیوں کی11 ہزار سے زائدشکا یات پر کا رروائی کی اور پا کستان کے تمام بین الا قوا می ہو ائی اڈوں پر قا ئم کئے گئے یکجا سہو لیا تی مرا کز پر27376شکا یات کا مو قع پر ہی ازالہ کیا گیا جب کہسہولیاتی کمشنر کے دفتر میں برا ہ راست 590شکا یات موصول ہو ئیں جن پر بر وقت کا رروائی کر کے اوورسیز پاکستا نیوں کے مسا ئل حل کئے گئے۔ واضح رہے کہ شکا یات کی یہ تعداد پہلے بیان کی گئی عمو می شکایات کی تعداد کے علا وہ ہے۔اسی طر ح قو می کمشنر برا ئے اطفال کے نام سے ایک اور الگ شعبہ سینئرایڈ وائزر اعجاز احمد قر یشی کی زیر نگرا نی کام کر رہا ہے جو بچوں کے مسا ئل کے حل کے لئے ہمہ وقت سرگرم عمل رہتا ہ۔

مزید :

پشاورصفحہ آخر -