کے۔ الیکٹرک کے بجلی کی چوری کے خلاف اقدامات جاری

        کے۔ الیکٹرک کے بجلی کی چوری کے خلاف اقدامات جاری

  

کراچی (اسٹاف رپورٹر) بجلی چوروں اور نا دہندگان کیخلاف اقدامات کرتے ہوئے کے۔الیکٹرک نے لیاری اور ملیر کے ان علاقوں کی بجلی منقطع کی جہاں کے واجبات  2.9ارب روپے سے تجاوز کر گئے تھے۔ صارفین کے ساتھ تعاون کرنے کی مسلسل کوششوں اور ان کو سہولت فراہم کرنے کیلئے اسکیم پیش کرنے کے باوجود بلوں کی ادائیگی نہیں ہوئی جس کی وجہ سے ادارہ کاروائی کرنے پر مجبور ہوا۔ بجلی منقطع کرنے کیخلاف لیاری کے صارفین نے  مختلف علاقوں میں جمع ہوکر احتجاج کیا۔ شہریوں نے موسیٰ لین اور کلری میں موجود کے۔الیکٹرک کے دفتر پر پتھراؤ کیا اور آتش گیر مادہ بھی پھینکا جس سے یوٹیلٹی کی املاک کو شدید نقصان پہنچا۔ خو ش قسمتی سے اسٹاف کے لوگ اس حملے میں محفوظ رہے۔ یوٹیلٹی نے نا معلوم حملہ آوروں کیخلاف ایف آئی آر درج کروادی ہے۔  ایک اور واقعہ میں بجلی کی بندش کیخلاف لی مارکیٹ کے علاقے میں لوگ احتجاج کیلئے جمع تھے جب نامعلوم افراد نے فائرنگ کر دی جس سے احتجاج میں شریک 2 افراد زخمی ہو گئے۔ احتجاج کو ہوا دینے والے کچھ عناصر نے اپنے مذموم مقاصد کو پورا کرنے کیلئے میڈیا میں حقائق کے منافی بیان جاری کر دیا جس سے صورتحال مزید خراب ہو گئی۔ کے۔ الیکٹرک کیخلاف طاقت کے استعمال کی شدید مذمت کرتے ہوئے کے۔الیکٹرک کے ترجمان نے کہا ”ہم اپنے صارفین کو معاونت فراہم کرنے کیلئے ہر وقت دستیاب ہیں لیکن ساتھ ساتھ ہم ان واجبات کی وصولی کیلئے بھی تعاون کے طلبگار ہیں جن کی وصولی سالہا سال سے نہیں ہوئی۔ چند علاقوں کے واجبات تو اربوں روپے سے بھی تجاوز کر گئے ہیں۔جو صورتحال پیش کی گئی ہے، اس کے بر خلاف کے۔الیکٹرک کا لی مارکیٹ میں پیش آنے والے افسوسناک واقعہ سے کوئی تعلق نہیں ہے۔ کے۔الیکٹرک اپنے صارفین کی ضروریات کو پورا کرنے کیلئے  انفرا اسٹرکچر کی بہتری لیلئے مسلسل سرمایہ کاری کر رہا ہے لیکن بلوں کی عدم ادائیگی ایسا غیر موزوں ماحول بناتی ہے جو کراچی کی توانائی کی ضروریات کو پورا کرنے کی ہماری کوششوں میں رکاوٹ پیدا کرتا ہے۔“

مزید :

پشاورصفحہ آخر -