ماں باپ نے 6 سالہ بیٹے کو بھوکا مار دیا، بچے کے آخری لمحات کی آڈیو ریکارڈنگ عدالت میں پیش کی گئی تو ہر آنکھ اشکبار ہوگئی

ماں باپ نے 6 سالہ بیٹے کو بھوکا مار دیا، بچے کے آخری لمحات کی آڈیو ریکارڈنگ ...
ماں باپ نے 6 سالہ بیٹے کو بھوکا مار دیا، بچے کے آخری لمحات کی آڈیو ریکارڈنگ عدالت میں پیش کی گئی تو ہر آنکھ اشکبار ہوگئی

  

لندن(مانیٹرنگ ڈیسک) برطانیہ میں ایک بدبخت ماں باپ نے اپنے چھ سالہ بچے کو بھوکا پیاسا مرنے کے لیے گھر میں تنہا چھوڑ دیا۔ اب اس بچے کی موت کا مقدمہ عدالت میں ہے جہاں گزشتہ پیشی پر پراسیکیوٹرز نے بچے کے آخری لمحات کے کچھ آڈیو کلپ پیش کیے ہیں جن میں بچہ اپنی موت سے روتے ہوئے ایک ایسا فقرہ بولتا ہے کہ سن کر عدالت میں موجود ہر شخص کا دل دہل گیا۔ 

دی سن کے مطابق اس معصوم بچے کا نام آرتھر لابنجو ہفس تھا جو ایک آڈیو کلپ میں روتے ہوئے کہتا ہے کہ ”کوئی بھی مجھ سے پیار نہیں کرتا اور کوئی بھی مجھے کھانا نہیں دے گا۔“ آرتھر 23سیکنڈز کے ایک کلپ میں چار بار یہ فقرہ دہراتا ہے کہ ”کوئی مجھ سے پیار نہیں کرتا۔“اس کے بعد اگلے کلپ میں 44سیکنڈز میں وہ 7بار دہراتا ہے کہ ”کوئی مجھے کھانا نہیں دے گا۔“اس کے علاوہ بھی آرتھر کے کئی کلپ عدالت میں پیش کیے گئے ہیں جن میں وہ کسی میں اپنے انکل اور دادی کو پکار رہا ہوتا ہے اور کسی میں روتے ہوئے پانی مانگ رہا ہوتا ہے۔

اس کے کچھ وقت بعد ہی آرتھر کی موت واقع ہو جاتی ہے۔ عدالت میں سی سی ٹی وی فوٹیج بھی پیش کی گئی ہے جس میں آرتھر کو انتہائی کمزور حالت میں دیکھا جا سکتا ہے او روہ اپنا چھوٹا سا بستر اٹھائے بمشکل چل رہا ہوتا ہے۔ یہ تمام آڈیو کلپ خود آرتھر کی ماں نے ریکارڈ کرکے اپنے شوہر کو بھیجے تھے۔پولیس نے آرتھر کے 29سالہ باپ تھامس ہفس اور اس کی 32سالہ ماں ایما ٹسٹن، جو اب تھامس سے الگ ہو چکی ہے، کو آرتھر کے قتل کے الزام میں گرفتار کرکے کوینٹری کراﺅن کورٹ میں پیش کیا ہے جہاں ان کے خلاف مقدمے کی کارروائی جاری ہے۔ 

مزید :

ڈیلی بائیٹس -