محکمہ صحت کے پی کے اور سنٹر فارلرننگ اینڈ لان بزنس کالج میں مفاہمتی یادداشت طے 

محکمہ صحت کے پی کے اور سنٹر فارلرننگ اینڈ لان بزنس کالج میں مفاہمتی یادداشت ...

  

       پشاور(سٹی رپورٹر) محکمہ صحت اور سنٹر فار لرننگ اینڈ لا ان بزنس کالج کے درمیان مفاہمتی یادداشت پر دستخط کردیئے گئے۔ مفاہمتی یادداشت کے تحت قانون پڑھنے والے طلبا کو فورنزک قوانین جبکہ ایم بی بی ایس طلبا کو میڈیکو لیگل قوانین پڑھائے جائیں گے، یہ چھ ماہ دورانئیے کا مختصر کورس ہوگا،خیبرمیڈیکل کالج کو پہلی دفعہ فورنزک اور ٹاکسیکالوجی کیلئے الگ سے فنڈز مہیا کیے گیے ہیں،میڈیکو لیگل کورس کا مقصد ڈاکٹروں کو قانونی امور سے آشنا کرنا ہے، پاکستان میں اپنی نوعیت کا یہ پہلا کورس ہے، میڈیکل کالجز میں سیلف فنانس کی فیس بڑھارہے ہیں جو کہ کالجز اور جامعات کے معاشی استحکام کیلئے ضروری ہے، اس پالیسی کے تحت 33 فیصد نادار طلبا کو سو فیصد سکالرشپ دیے جاسکیں گے جو کہ پہلے کہیں نہیں تھا، وزیر صحت و خزانہ کی پریس کانفرنس۔وزیر صحت و خزانہ تیمور سلیم جھگڑا نے محکمہ صحت اور سنٹر فار لرننگ اینڈ لا ان بزنس کالج کے درمیان مفاہمتی یادداشت پر دستخط کے موقع پر منعقدہ پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہا ہے کہ خیبرمیڈیکل کالج کو پہلی دفعہ فورنزک اور ٹاکسیکالوجی کیلئے الگ سے فنڈز مہیا کیے گیے ہیں۔ میڈیکو لیگل کورس کا مقصد ڈاکٹروں کو قانونی امور سے آشنا کرنا ہے۔پاکستان میں اپنی نوعیت کا یہ پہلا کورس ہے۔ چیف جسٹس ہائیکورٹ نے قانون اور طب کے مابین گیپ کی نشاندہی کی تھی۔ مفاہمتی یادداشت پر وزیر صحت و خزانہ تیمور سلیم جھگڑا کی موجودگی میں وی سی کے ایم یو پروفیسر ڈاکٹر ضیاالحق اور لا کالج کے پرنسپل دلاور خان نے دستخط کئے۔ اس موقع پر میڈیا نمائندوں سے بات کرتے ہوئے وزیر صحت نے بتایا کہ میڈیکو لیگل پروسیجر کرنے والے ڈاکٹروں کیلئے بھی ہفتے دو کے ریفریشر کورسز متعارف کرانے چاہئے تا کہ ڈاکٹرز میڈیکل کراتے وقت رائج قوانین سے شناسائی حاصل کرسکیں اور عدالت کی صحیح رہنمائی کی جاسکے۔ انہوں نے مزید بتایا کہ میڈیکل کالجز کی فیسوں کے حوالے سے پالیسی متعارف کرارہے ہیں۔ جو فیس برداشت نہیں کرسکتا وہ بالکل مفت میں پڑھے گا۔ کالج کے پاس اختیار ہوگا کہ ہونہار طلبا کو سو فیصد سکالرشپ دے۔ سیلف فنانس کی فیس بڑھارہے ہیں جو کہ کالجز اور جامعات کے معاشی استحکام کیلئے ضروری ہے۔ میڈیکل کالجز میں اوپن میرٹ پر ماہانہ چھ ہزار روپے ٹیوشن فیس متعین کی گئی ہے تیمورجھگڑا نے بتایا کہ سرکاری میڈیکل کالجز میں سیلف فنانس کی فیس آٹھ لاکھ سے بارہ لاکھ کردی ہے۔ اس پالیسی کے تحت 33 فیصد نادار طلبا کو سو فیصد سکالرشپ دیے جاسکیں گے جو کہ پہلے کہیں نہیں تھا۔میڈیکل ہائیر ایجوکیشن کا فریم ورک صوبے کیلئے ناگزیر ہے۔ کچھ فیصلے سیاسی طور پر مشکل ہوتے ہیں لیکن پھر بھی اداروں اور عوام کی فلاح کیلئے لینے پڑتے ہیں۔وزیر خزانہ نے بتایا کہ خیبر پختونخوا حکومت نے جامعات کے خسارے کو دور کرنے کیلئے 5 ارب دینے کا فیصلہ کیا ہے۔ سرکاری جامعات کو موجودہ ماڈل میں خسارے کا سامنا ہے۔ صوبے میں جامعات کی بڑھتی ہوئی تعداد کے باعث حکومت کو بھی فنڈز کی تقسیم میں مسئلہ ہے۔ حکومت نے سیلف فنانس کی سیٹوں کو بھی بڑھانے کی منظوری دی میڈیکل کالجز کی فیس اب بھی پرائیوٹ سکولز سے کم ہے۔ ہر سال میڈیکل کالجز میں 1754 طلبہ کو داخلہ دیتے ہیں۔ میڈیکل کالجز کے طلبہ میں 200 سیلف فنانس پر داخلہ لے سکتے ہیں۔ اوپن میرٹ پر آنے والے 33 فیصد طلبہ کو مکمل سکالرشپ دینگے۔

مزید :

صفحہ اول -