منچلی لڑکی کی کہانی سٹیج ڈرامہ’’بے بی کو بیس پسند ہے‘‘

منچلی لڑکی کی کہانی سٹیج ڈرامہ’’بے بی کو بیس پسند ہے‘‘

حسن عباس زیدی

پاکستان کے مختلف شہروں میں اس وقت سٹیج ڈرامے پیش کئے جاتے ہیں لاہور کے بعد جس شہر میں سب سے زیادہ تھیٹر دیکھا جاتا ہے وہ فیصل آباد ہے اس شہر میں پیش کئے جانے والے تمام ڈراموں میں سٹار کاسٹ کام کرتی ہے منروا تھیٹر میں سب سے بڑی کاسٹ کے ساتھ ڈرامہ پیشکئے جاتے ہیں۔فیصل آباد میں ان دنوں جاری ڈرامہ’’ بے بی کو بیس پسند ہے‘میں ماہ نور اور دیگر فنکاروں نے اپنی زبردست پرفارمنس سے پرستاروں کے دل جیت لئے ہیں ۔’’پاکستان‘‘سے گفتگو کرتے ہوئے ماہ نور نے بتایا کہ ہمارا ڈرامہ ہٹ جا رہا ہے اس ڈرامہ کی کامیابی کو ٹیم ورک کا نتیجہ قرار دیتی ہوں ایک فنکار ڈرامہ کواکیلا ہٹ نہیں کرسکتا پوری ٹیم ڈائریکٹر کی قیادت میں یہ کام کرتی ہے ۔اس ڈرامہ کی پسندیدگیکے لئے میں اپنے پرستاروں کا دل کی گہرائیوں سے شکریہ ادا کرتی ہوں۔ میں آج جو کچھ ہوں اپنے پرستاروں کی محبت اور پیار کی وجہ سے ہوں۔میں اس وقت فلم اور تھیٹر دونوں میں اداکاری کے جوہر دکھا رہی ہوں۔ایک سوال کے جواب میں ماہ نورنے بتایا کہ تماثیل تھیٹر میں گزشتہ سپل میں پیش کیا جانے والا ڈرامہ سُپر ہٹ گیا ہے اس ڈرامہ میں میرے ڈانس آئٹم کو سوچ سے زیادہ پذیرائی ملی۔’’بے بی کو بیس پسند ہے‘‘کے لئے میں نئے ڈانس آئٹم اور ڈریسز تیار کروائے ہیں میری ہمیشہ کوشش ہوتی ہے کہ میں اپنے پرستاروں کے لئے کچھ ہٹ کر پیش کروں۔اس ڈرامہ میں ایک منفرد کردار ادا کررہی ہوں۔میں نے اس سے قبل بہت سارے ڈراموں میں کام کیا ہے لیکن اس ڈرامے میں روائتی ڈگر سے ہٹ کر رول کرنے کا جو مزا آیا ہے اس کو الفاظ میں بیان کرنا ممکن نہیں ہے۔میں مستقبل میں بھی اس ٹیم کے ساتھ کام کرنا چاہوں گی۔یہ ڈرامہمنچلی لڑکی کی کہانی ہے۔میری کوشش ہوتی ہے کہ میں اپنے کام سے مکمل انصاف کروں۔غفور کوڈواور شبیر آکاش نے بھی ملے جلے خیالات اور جذبات کا اظہار کیا۔’’بے بی کو بیس پسند ہے‘‘کے نمایاں فنکاروں میں ماہ نور،سونم چوہدری،تسلیم عباس،شبیر آکاش،آرزو شیخ،فضاء خان،غفور کوڈو،اجالا ملک ،اسلم چٹا اور رفیق ببلو شامل ہیں۔ اس ڈرامہ کے ڈائریکٹر ایم صفدر اور پروڈیوسر رانا شانی ہیں۔

مزید : ایڈیشن 1


loading...