پیپروں کی ناقص مارکنگ ،تحقیقاتی کمیٹی نے پنجاب بھر کے تعلیمی بورڈز میں انقلابی اصلاحات کی سفارش کر دی

پیپروں کی ناقص مارکنگ ،تحقیقاتی کمیٹی نے پنجاب بھر کے تعلیمی بورڈز میں ...

لاہور (لیاقت کھرل) سیکنڈری اور انٹرمیڈیٹ کے امتحانات میں پیپروں کی ناقص مارکنگ کے حوالے سے تحقیقاتی کمیٹی نے پنجاب بھر کے تعلیمی بورڈز میں انقلابی اصلاحات کی سفارش کردی،وزیراعلیٰ پنجاب کو پیش کی جانے والی تحقیقاتی رپورٹ میں ایگزامینرز کو پسند وناپسند کی بنیاد پر تعینات نہ کرنے پر بھی زور دیا گیا۔رپورٹ میں تعلیمی بورڈز کے چیئرمینوں، سیکرٹریوں اور کنٹرولرز کو ذمہ داریوں میں عدم دلچسپی، سستی، نااہلی اور کوتاہی کا مرتکب قرار دیتے ہوئے محکمانہ کارروائی کی سفارش بھی کردی۔ذرائع کے مطابق وزیراعلیٰ پنجاب کو پیش کی جانے والی رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ بورڈز حکام کے تربیت یافتہ ہونے کے ساتھ ساتھ ایگزامینرز بھی مکمل تربیت اور اس میں ایگزامینرز کی تعیناتی میں پسند ناپسند کے سلسلہ کو ختم اور تعیناتی میں مکمل میرٹ کو پالیسی کا حصہ بنایا جائے جبکہ ایگزامینرز کے تحفظات اور نتائج کی تیاری میں پائی جانے والی تکنیکی اور فنی خرابیوں کو دور کیا جائے۔ ایگزامینرز کا معاوضے میں 100 فیصد اضافہ کیا جائے اور بورڈز حکام پیپروں کی مارکنگ اور نتائج کی تیاری کے دوران مانیٹرنگ اور نگرانی کو مزید موثر بنائیں اور ایگزامینرز کو زیادہ سے زیادہ سہولتوں سے ہمکنار کیا جائے۔ رپورٹ میں اس بات کا بھی ذکر کیا گیا ہے کہ انٹر بورڈ پیپروں کی مارکنگ سے امتحانی نتائج کو فول پروف بنائے جانے کا دعویٰ تو کیا گیا لیکن اس میں تکنیکی و فنی امور کار فرما ہونے اور ایگزامینرز کے تحفظات سمیت بعض ضروری نقائص کو دور کرنے سے امتحانی نتائج کو غلطیوں سے پاک کیا جاسکتا ہے وگرنہ مارکنگ اور نتائج کی تیاری مزید سنگین صورتحال اختیار کرسکتی ہے جبکہ اس حوالے سے محکمہ ہایئر ایجوکیشن کے ذمہ دار حکام کا کہنا ہے کہ انٹر بورڈ پالیسی ایگزامینرز کے تحفظات سمیت تکنیکی و فنی خرابیوں کو دور کیا جا رہا ہے۔

مزید : صفحہ آخر


loading...