پاکستان کیخلاف سازشین عروج پر ہیں ،دھرنے کی کامیابی ملک کیلئے نقصان دہ ہو گی :جاوید ہاشمی

پاکستان کیخلاف سازشین عروج پر ہیں ،دھرنے کی کامیابی ملک کیلئے نقصان دہ ہو گی ...

ملتان( سپیشل رپورٹر) سینئر سیاستدان مخدوم جاوید ہاشمی نے کہا ہے کہ اس وقت پاکستان کیخلاف بیرونی سازشیں عروج پر پہنچ چکی ہیں ،دھرنا ملک کے حق میں نہیں ہے اگر دھرنا کامیاب ہوا تو ملک کیلئے نقصان دہ ہوگا،انڈیا چاہتا ہے کہ پاکستان کے ٹکڑے ہوں تاکہ وہ سی پیک منصوبے میں اپنی مرضی سے راستہ حاصل کرسکے ،مجھے نواز حکومت اور جنرل راحیل کے مستقبل سے کوئی دلچسپی نہیں بلکہ پاکستان کے مستقبل کی فکر ہے ،سی پیک منصوبہ کا میاب ہوا تو پاکستان میں ترقی کی نئی راہیں کھلیں گی اور عوام کو روزگار ملے گا ان خیالات کا اظہار انھوں نے گزشتہ روز ملتان میں اپنی رہائش گاہ پر پریس کا نفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کیا ۔پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے مخدوم جاوید ہاشمی نے کہا کہ سی پیک منصوبہ کی کامیابی میں ہی ملکی ترقی کی کامیابی ہے جو پاکستان کے دشمنوں کو کسی صورت میں قبول نہیں ہے جس کے نتیجہ میں پاکستان کیخلاف سازشیں عروج پر پہنچ چکی ہیں انھوں نے کہا کہ بھارت ہمارے اندرونی خلفشار کا فائدہ اٹھا کر ملک کے ٹکڑے کرنا چاہتا ہے تاکہ سی پیک منصوبے میں اپنی مرضی کا راستہ حاصل کرسکے لیکن دوسری جانب ہمارے سیاستدان اپنی اندرونی لڑائیاں لڑے میں مصروف ہیں جس کا فائدہ دشمن اٹھا رہا ہے ۔انھوں نے کہا کہ پتہ نہیں عمران خان کس کے کہنے پر سی پیک منصوبے کی دھجیاں اڑا رہا ہے کیونکہ عمران خان کو ایک گھنٹہ پہلے تک پتہ نہیں ہوتا کہ اس نے کیا کرناہے کیونکہ تحریک انصاف میں مشاورت کا کوئی نظام نہیں تحریک انصاف کی کور کمیٹی کچھ فیصلہ کرتی ہے اور عمران خان کچھ اور فیصلہ کرتے ہیں ۔ روس اور بھارت پاکستان کو توڑنا چاہتے تھے لیکن روس نے تو بہ کرلی اور اب پاکستان سے دوستی کا ہاتھ بڑھا رہا ہے بھارت بھی چھ سات ماہ کے بعد روس کی طرح گھٹنے ٹیک دے گا اور راستہ مانگے گا انڈیا کو اپنی معاشی ترقی کے لئے مسئلہ کشمیر حل کرنا پڑے گا ا نہوں نے کہا کہ انڈیا کی معاشی ترقی بھی واہگہ بارڈر کے زریعے سنٹرل ایشیاء تک رسائی سے ممکن ہے چاہ بہار کے زریعے بھارت کی سنٹرل ایشیاء تک رسائی موزوں نہیں ہے انہوں نے کہا کہ پرویز خٹک کے سی پیک کے سوالات کا جواب چینی سفیر نے دے دیا ہے انہوں نے کہا کہ ہمارے سیاستدان اپنی جنگیں ضرور لڑیں مگر امریکہ یا دوسروں کی جنگیں نہ لڑیں پارلیمنٹ یا سسٹم کو توڑ کر کوئی گارنٹی ہے کہ الیکشن ہوجائیں گے میں کہتا ہوں کہ ایسی صورت میں الیکشن آئندہ دو سال تک بھی نہیں ہونگے ۔ انہوں نے کہا کہ میں عمران خان سے کہوں گا کہ جس کے کہنے پر وہ باتیں کرتے ہیں ایسا نہ کریں ۔انھوں نے کہا کہ یہ لڑائی نہیں یکجہتی کا مرحلہ ہے کیونکہ باہر کے لوگ اداروں کو توڑنا چاہتے ہیں آج عوام کو ڈینجر زون میں دھکیلا جارہا ہے اگر ادارے ٹوٹے تو ملک کو ناقابل تلافی نقصان پہنچے گا ۔انھوں نے کہا کہ مجھے نواز شریف ،عمران اور راحیل شریف کے مستقبل کوئی فکر نہیں ہے اور حلفاًکہتا ہوں کہ مسلم لیگ ن نے مجھ سے کوئی رابطہ نہیں کیا۔حکومت اور پاک فوج میں کشیدگی کے سوال کے جواب میں انھوں نے کہا کہ میں حافظ سعید کے ساتھ ہوں کیونکہ دفاع پاکستان کونسل بھی میں نے ہی بنائی تھی انھوں نے کہا کہ 2نومبر کے دھرنے کی کامیابی ملک کیلئے نقصان دہ ہوگی ۔

مزید : صفحہ آخر


loading...