پولیس ٹریننگ سینٹر کے بارے میں آئی جی بلوچستان نے کیا کہا تھا ؟ ایسا انکشاف منظر عام پر کہ جان کر پاکستانیوں کے غصے کی انتہا نہ رہے گی

پولیس ٹریننگ سینٹر کے بارے میں آئی جی بلوچستان نے کیا کہا تھا ؟ ایسا انکشاف ...
 پولیس ٹریننگ سینٹر کے بارے میں آئی جی بلوچستان نے کیا کہا تھا ؟ ایسا انکشاف منظر عام پر کہ جان کر پاکستانیوں کے غصے کی انتہا نہ رہے گی

  

کوئٹہ (مانیٹرنگ ڈیسک )گزشتہ رات دہشت گردی کا نشانہ بننے والے سریاب پولیس ٹریننگ سینٹر کی بیرونی دیواریں ٹوٹ پھوٹ کا شکار ہیں۔پولیس کے اعلیٰ حکام کی جانب سے سریاب پولیس ٹریننگ سینٹر کی دیوار کی از سر نو تعمیر کا مطالبہ کیا گیا تھا مگر حکومت نے اس طرف کو ئی توجہ نہیں دی ۔

جیو نیوز کے مطابق آئی جی بلوچستان نے سریاب پولیس ٹریننگ سینٹر کالج کی دیوار کیلئے سکیم کی منظوری کی اپیل کی تھی تاہم اس کے باوجود حکام نے اس منصوبے کو منظور نہیں کیا ۔

کوئٹہ میں پولیس ٹریننگ سینٹر پر خودکش حملے، 61اہلکار شہید ، 120زخمی

ٓآئی جی بلوچستان احسن محبو ب نے چند ہفتے پہلے ایک تقریب سے خطاب کے دوران پولیس ٹریننگ سینٹر کے ہاسٹل کی تزین و آرائش کئلئے فنڈز فراہم کرنے کا مطالبہ بھی کیا تھا جبکہ انہوں نے آئندہ چند روز میں سی ٹی ڈی کورس سے متعلق بھی آگاہ کیا تھا مگر اس کے باوجود گزشتہ رات دہشت گردی کا نشانہ بننے والے سریاب پولیس ٹریننگ سینٹر کی دیواروں کو بلند کرنے اور خاردار تاریں لگانے کے حوالے سے کوئی اقدام نہیں کیا گیا ۔ 

گزشتہ رات گیارہ بجے کے قریب تین دہشت گرد ٹریننگ سینٹر کی عقبی دیوار پھلانگ کر باآسانی عمارت میں داخل ہوئے جنہوں نے 61اہلکاروں کو شہید اور 120کو زخمی کیا ۔

پشاور میں تھانہ داﺅد زئی کے علاقے میں بھی دھماکا 

ذرائع کا کہنا ہے کہ پولیس ٹریننگ سینٹر کی بیرونی دیواریں نہ صرف کچی اورخستہ حال ہیں بلکہ پانچ فٹ سے بھی کم اونچی ہیں جس وجہ سے دہشت گرد باآسانی دیوار یں پھلانگ کر سینٹر میں داخل ہوئے اور 250سے زائد زیر تربیت اہلکاروں کو یرغمال بھی بنائے رکھا تاہم اگر ٹریننگ سینٹر کی دیوار کی تعمیر کے حوالے سے بروقت اقدامات کر لیے جاتے تو اس حملے کو ناکام بنایا جا سکتا تھا اور دہشت گردوں کو عمارت کے باہر ہی ہلاک کیا جا سکتا تھا ۔

مزید : کوئٹہ