کیپٹن روح اللہ کی منگنی کرد ی گئی تھی اور اگلے سال جنوری میں شادی کرنی تھی :والد

کیپٹن روح اللہ کی منگنی کرد ی گئی تھی اور اگلے سال جنوری میں شادی کرنی تھی ...
کیپٹن روح اللہ کی منگنی کرد ی گئی تھی اور اگلے سال جنوری میں شادی کرنی تھی :والد

  


کوئٹہ(مانیٹرنگ ڈیسک)کوئٹہ میں پولیس ٹریننگ سنٹر ہاسٹل میں دہشت گردوں کیخلاف لڑتے ہوئے شہید ہونے والے کیپٹن روح اللہ کے والدنے کہاہے کہ میں چاہتا تھا کہ وہ ڈاکٹر بنے لیکن روح اللہ پاک فوج میں شمولیت اختیار کر کے ملک کی خدمت کرنا چاہتا تھا ۔

تفصیلات کے مطابق کیپٹن روح اللہ 26سال کی عمر میں شہادت کے درجے پر فائز ہو گئے ہیں جبکہ وہ چارسدہ کی تحصیل شبقدر کے علاقے اوچ والا کے رہائشی تھے ،انہوں نے ابتدائی تعلیم اسلامیہ سکول اور سیکنڈر ی تعلیم حیات آباد میڈیکل کالج سے حاصل کی ۔

مزیدپڑھیں:کوئٹہ حملے میں پاک فوج کے کپتان کی شہادت سے متعلق ایسا انکشاف کہ آپ کو بھی پاک فوج پر فخر ہو گا

کیپٹن روح اللہ شہید کے والد نجیب اللہ محمد نے بتایا کہ وہ چاہتے تھے کہ ان کا بیٹا ڈاکٹر بنے لیکن وہ چاہتاتھا کہ وہ پاک فوج میں شمولیت اختیار کرکے ملک کی خدمت کرے ۔روح اللہ نے 2009میں پاک فوج میں شمولیت اختیار کی ۔ان کا کہناتھا کہ روح اللہ کی منگنی ہو گئی تھی اور آئندہ سال جنوری میں شادی کرنے جار ہے تھے ۔انہوں نے کہا کہ روح اللہ نے ملک کیلئے جان قربان کر کے ہم سب کا سر فخر سے بلند کر دیاہے ۔

مزیدپڑھیں:سانحہ کوئٹہ ،دہشت گردوں کے ساتھ مقابلے میں پاک فوج کے کیپٹن روح اللہ شہید ہو گئے

کیپٹن روح اللہ کے چچاز اد بھائی اور بچپن کے بہترین دوست احتشام محمد کا کہناہے کہ وہ انتہائی خوش مزاج اور ہمیشہ خوش رہنے والا نوجوان تھا ،وہ ہمیشہ سے ہی پاک فوج میں شمولیت اختیار کرنا چاہتا تھا ۔جب کبھی ہم اسے بات چیت کیلئے ٹیلیفون کرتے تھے تو وہ کہتا تھا کہ فرائض کی انجام دہی کے وقت تنگ مت کیا کرو جبکہ اس نے ہم سے وعدہ بھی کیا تھا کہ وہ اگلے مہینے چھٹی پر ہم سب سے ملنے کیلئے آئے گا ۔روح اللہ کے تین بھائی اور ایک بہن ہے ۔

واضح رہے کہ سریا ب میں پولیس ٹریننگ سینٹر پر خودکش حملوں کے نتیجے میں کیپٹن روح اللہ سمیت 61اپولیس ہلکار شہید اور5 فوجی جوانوں سمیت 120زخمی ہو گئے۔

مزید : قومی /اہم خبریں


loading...