جمہوریت کو کام نہیں کرنے دیا گیا تو فیکٹریاں اور شوگر ملیں کیسے بن گئیں، تجزیہ کار ایاز امیر نے سوال اٹھادیا

جمہوریت کو کام نہیں کرنے دیا گیا تو فیکٹریاں اور شوگر ملیں کیسے بن گئیں، ...
جمہوریت کو کام نہیں کرنے دیا گیا تو فیکٹریاں اور شوگر ملیں کیسے بن گئیں، تجزیہ کار ایاز امیر نے سوال اٹھادیا

  



لاہور (ڈیلی پاکستان آن لائن)تجزیہ کار ایاز امیر نے کہاہے کہ اگر ملک میں جمہوریت کو کام نہیں کرنے دیا گیا تو ایک اتفاق فاﺅنڈر ی سے کئی فیکٹریاں اور سندھ میں 17شوگر ملیں کیسے بن گئیں، آج کل کے جمہوریت نوازوں کیلئے جنرل حمید گل سیڑھیاں لگاتے تھے ۔

دنیا نیوز کے پروگرام ”تھنک ٹینک“میں گفتگو کرتے ہوئے ایاز امیر نے کہا کہ یہ جو کہتے ہیں کہ جمہوریت کوکام نہیں کرنے دیاگیا ،واقعی پاکستان میں جمہوریت کو کام نہیں کرنے دیا گیا ، ایک اتفاق فاﺅنڈری تھی ، اب کتنی بن گئی ہیں ، آصف زرداری کی 17شوگر ملیں بن گئی ہیں ۔ وہ کیسے بن گئی ہیں ؟ انہوں نے کہا کہ آج کل کے جمہوریت نوازوں کیلئے جنرل حمید گل سیڑھیاں لگاتے تھے ۔

ایاز امیر کا کہنا تھا کہ اس وقت تحریک انصاف کی کابینہ میں بھی جو لوگ اکٹھے ہوگئے ہیں ، ان میں سے کھرب پتی سے کم کوئی نہیں ہے ، عمران خان ایسے بات کرتے ہیں جیسے امام خمینی ہیں ۔ اس وقت سٹیٹس کو اکٹھا ہوچکا ہے ، لوگ ان ساری سیاسی پارٹیوں سے تنگ آچکے ہیں جیسے لبنان کے عوام اپنے ملک میں موجود سیاسی پارٹیوں سے تنگ آچکے ہیں۔

مزید : علاقائی /پنجاب /لاہور