وزیراعلیٰ بلوچستان نے پی ڈی ایم جلسے کو تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے اپنی ہی بات کی نفی کر دی

وزیراعلیٰ بلوچستان نے پی ڈی ایم جلسے کو تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے اپنی ہی بات ...
وزیراعلیٰ بلوچستان نے پی ڈی ایم جلسے کو تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے اپنی ہی بات کی نفی کر دی

  

کوئٹہ(ڈیلی پاکستان آن لائن)وزیراعلیٰ بلوچستان جام کمال نے ایک طرف پی ڈی ایم کے بیان تنقید کرتے ہوئے کہا کہ کوئی صوبہ چھوٹا بڑا نہیں ہوتا اور ساتھ ہی لکھ دیا بلوچستان پاکستان کا سب سے بڑا صوبہ ہے۔ ان کا یہ بھی کہنا تھا کہ کوئٹہ میں پی ڈی ایم کا جلسہ تھا یا بی جے پی کا؟

وزیراعلیٰ بلوچستان جام کمال نے مائیکرو بلاگنگ ویب سائٹ ٹوئٹر پر اپوزیشن کے کوئٹہ میں جلسے پر تنقید کرتے ہوئے کہا کہ پی ڈی ایم بلوچستان کو چھوٹا صوبہ کہنا بند کرے، پاکستان کے سب صوبے برابرہیں۔ ان کی یہ بات ظاہر کرتی ہے کہ یہ بلوچستان کو خود سے چھوٹا سمجھتے ہیں ۔وزیراعلیٰ جام کمال نے اپنے اسی ٹویٹ کے نیچے کہہ دیا کہ بلوچستان پاکستان کا سب سے بڑا صوبہ ہے۔ان کا مزید کہنا تھاکہ ن لیگ اور پیپلزپارٹی کو اقتدار میں ہوتے ہوئے بلوچستان کی محبت یاد نہیں آئی، کورونا اور سیلاب کے دوران بھی بلوچستان نہیں آئے۔

کوئٹہ جلسے کے دوران اویس نورانی کے بلوچستان کو علیحدہ ریاست کے بیان پروزیراعلیٰ بلوچستان جام کمال نے ردعمل دیتے ہوئے کہا کہ آج کوئٹہ میں پاکستان ڈیموکریٹک موومنٹ کا جلسہ تھا یا بی جے پی کا؟ ان کاکہنا تھاکہ جلسہ میں مودی کے نظریئے کو دہرایا گیا۔ 

مزید :

علاقائی -بلوچستان -کوئٹہ -