خلائی مشن کے دوران خلاءبازوں کے قد میں اضافہ لیکن زمین پر واپس پہنچنے کے بعد کن تکالیف کا سامنا کرنا پڑتا ہے؟ تہلکہ خیز دعویٰ 

خلائی مشن کے دوران خلاءبازوں کے قد میں اضافہ لیکن زمین پر واپس پہنچنے کے بعد ...
خلائی مشن کے دوران خلاءبازوں کے قد میں اضافہ لیکن زمین پر واپس پہنچنے کے بعد کن تکالیف کا سامنا کرنا پڑتا ہے؟ تہلکہ خیز دعویٰ 
سورس: Pixabay.com (creative commons license)

  

نیویارک(مانیٹرنگ ڈیسک) خلاءمیں جانے والے مشنز کے بارے میں تو آپ اکثر سنتے رہتے ہوں گے۔ یہ خلاءنورد بین الاقوامی خلائی سٹیشن پر جا کر تحقیقاتی کام کرتے ہیں۔ اب ان خلاءبازوں کے بارے میں امریکہ کی جانز ہاپکنز یونیورسٹی کے سائنسدانوں نے ایک حیران کن دعویٰ کر دیا ہے۔

 ڈیلی سٹار کے مطابق سائنسدانوں نے بتایا ہے کہ خلائی مشن پر جانے والے خلاءبازوں کے قد خلاءمیں گزرے وقت کے دوران 3انچ تک بڑھ جاتے ہیں اور ان کا یہ بڑھا ہوا قد واپس زمین پر آ کر ان کے لیے مصیبت بن جاتا ہے۔سائنسدانوں نے بتایا ہے کہ قد میں اس اضافے کی وجہ سے خلاءباز واپس زمین پر آ کر دائمی کمردرد کا شکار ہو جاتے ہیں۔

 خلاءبازوں کے قد میں اضافے کی وجہ بیان کرتے ہوئے تحقیقاتی ٹیم کے سربراہ ڈاکٹر ریڈوسٹین پینچیف نے بتایا کہ خلاءمیں کشش ثقل نہ ہونے اور بے وزنی کی کیفیت کے سبب خلاءبازوں کی ریڑھ کی ہڈی بالکل سیدھی ہو جاتی ہے جس سے ان کے قد میں کسی قدر اضافہ ہو جاتا ہے۔ اب تک سب سے زیادہ اضافہ 3انچ ریکارڈ کیا گیا ہے۔ زمین پر ہماری ریڑھ کی ہڈی کی شکل انگریزی حرفSکی شکل کی ہوتی ہے جو کشش ثقل کے خلاف مزاحمت میں مددگار ہوتی ہے تاہم خلاءمیں جا کر ریڑھ کی ہڈی کا یہ خم کم یا بالکل ختم ہو جاتا ہے اور خلاءبازوں کے قد میں اضافہ ہو جاتا ہے۔

مزید :

ڈیلی بائیٹس -