انبیا ءاور آسمانی کتابوں کی توہین دنیا کی سب سے بڑی دہشتگردی ہے،جماعت اسلامی

انبیا ءاور آسمانی کتابوں کی توہین دنیا کی سب سے بڑی دہشتگردی ہے،جماعت اسلامی

  



لاہور(پ ر)جماعت اسلامی پاکستان کی مرکزی مجلس شوریٰ نے اپنے حالیہ اجلاس میں ایک قرار داد کے ذریعے انبیاءاور آسمانی کتابوں کی توہین کو دنیا کی سب سے بڑی دہشت گردی قرار دیتے ہوئے گستاخانہ خاکوں اور فلموں کی اشاعت اور مغربی دنیا کے منافقانہ طرزِ عمل کی شدید مذمت کی ہے اور پوری دنیا میں مسلمانوں کے ردعمل اور احتجاج کا خیر مقدم اور پاکستانی قوم کو خراج تحسین پیش کیاہے ۔ قرار داد میں کہا گیاہے کہ تمام طبقات نے بلاتفریق مسلک و سیاست حضور نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم سے کھل کر اپنی محبت کا اظہار کیا ہے اور فلم کے خلاف مسلسل احتجاج کرکے اپنے زندہ ہونے کا ثبوت دیا ہے۔ عالم اسلام کے اس احتجاج نے جہاں مغرب کے پروردہ مسلم حکمرانوں کو جگانے کی کوشش کی ہے وہیں اہل مغرب کو بھی یہ پیغام دیا ہے کہ حضور نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کی شان میں گستاخی کو کسی صورت برداشت نہیں کیاجائے گا۔ جماعت اسلامی پاکستان کی مرکزی مجلس شوریٰ کا یہ اجلاس حکومت پاکستان کے یوم عشق رسول صلی اللہ علیہ وسلم منانے اور اس دن عام تعطیل کے فیصلے کو قدر کی نگاہ سے دیکھتاہے لیکن تحفظ ناموس رسالت صلی اللہ علیہ وسلم کے لیے اسے ناکافی سمجھتاہے۔ حکومت پاکستان کو چاہیے کہ وہ نہ صرف امریکی حکومت سے سخت احتجاج کرے بلکہ ایسے اقدامات دوبارہ نہ ہونے کی یقین دہانی تک سفارتی احتجاج کو جاری رکھا جائے۔ نیز فوری طور پر او آئی سی کا اجلاس بلایا جائے تاکہ تمام مسلم ممالک اس اہم ایشو پر مشترکہ حکمت عملی اپنائیں اور متحد ہوکر اقوام متحدہ میں اس حوالے سے قرار داد منظور کروائیں۔ قرار داد میں پاکستانی عوام سے اپیل کی گئی ہے کہ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کی ذات اور سیرت پر عمل ہی تحفظ ناموس رسالت کے لیے سب سے بڑا انفرادی قدم ہے اور آج کی دنیا کو سیرت مصطفی صلی اللہ علیہ وسلم سے درست طور پر متعارف کروانے کے لیے اپنے کردار سمیت اپنی گفتگو اور سوشل میڈیا کو بھرپور استعمال کریں ۔مغربی استعمار بخوبی جانتاہے کہ مسلمان قوم کی قوت وطاقت کا اصل سرچشمہ اس کا جذبہ ایمان ہے اور یہی ان کے لیے خطرے کا اصل باعث ہے لہٰذا اس جذبہ ایمانی کو سرد کرنے کے لیے عالمی سطح پر سازشوں کو منظم انداز میں تیز کردیا گیاہے۔ چینلز پر عریانیت کا پھیلتاہوا سلسلہ ، اسلامی اقدار ،شعائر ، اخلاقیات اور تہذیب پر تابڑ توڑ حملے ، ڈراموں اور اشتہارات میں مغربی اور ہندوانہ معاشرت کا فروغ ، شرم و حیا کے تقاضوں سے متصادم اور فحش مناظر کی بھرمار اسی لیے ہے کہ مسلمان فحاشی و عریانی میں گم ہوکر اسلامی شعائر اور اقدار سے ناآشنا ہوجائیں اور مغربی تہذیب و ثقافت کی غلامی کو اپنے لیے باعث افتخار سمجھنے لگیں ۔لہٰذا یہ اجلاس تجویز کرتا ہے کہ حکومت پاکستان میں بڑھتی ہوئی فحاشی و عریانی اور مغربی و ہندوانہ تہذیب کے خلاف آئین پاکستان اور قرار داد مقاصد کی روشنی میں ٹھوس اقدامات کرے اور پیمرا قوانین پر عمل درآمد کو یقینی بنائے۔

مزید : صفحہ آخر


loading...