زرداری میرا مقابلہ یا سیاست سے کنارا کرکے اللہ اللہ کریں: نواز شریف

زرداری میرا مقابلہ یا سیاست سے کنارا کرکے اللہ اللہ کریں: نواز شریف
زرداری میرا مقابلہ یا سیاست سے کنارا کرکے اللہ اللہ کریں: نواز شریف

  



 لاہور(مانیٹرنگ ڈیسک)مسلم لیگ ن کے سربراہ میاںمحمد نواز شریف نے کہا ہے کہ بلوچستان کی صورتحال کو جواز بنا کر انتخابات ملتوی کرنے کی اجازت نہیں دی جائے گی،صدر زرداری استعفیٰ دیں یا پیپلزپارٹی کی سیاست سے الگ رہیں، زرداری صاحب کے پاس دو چوائسز ہیں کہ وہ الیکشن تک بالکل نیوٹرل رہیں اور کوئی سیاسی کردار ادا نہ کریں اورمکمل مراقبے میں جا کر اللہ اللہ کریں۔دوسری چوائس ہے کہ صدر زرداری صدارت چھوڑ کر میدان میں آئیں اور انتخابات میںحصہ لیں۔ اگر پاکستان میں متنازعہ انتخابات ہوئے تو یہ ملک کےلئے بہت بڑا المیہ ہو گا کیونکہ ان الیکشنوں کو کوئی بھی قبول کرنے کیلئے تیار نہیں ہو گا۔ایک نئی تحریک جنم لے گی جو ملک کو پتہ نہیں کہاں لے جائے گی اور بہت سی دوسری طاقتیں اس کا فائدہ اٹھا سکتی ہیں۔ میاں محمد نواز شریف نے کہا کہ کمزور مشعیت والی دھرتی میں ڈرون ہی اڑیں گے اور اس کے علاوہ کچھ نہیںہوسکتا ۔ پاکستان کی بین الاقوامی سطح پر کوئی عزت نہیں ہے ۔ مسلم لیگ ن کی دور حکومت میں پاکستان خطے کا سب سے زیادہ ترقی یافتہ ملک تھا اور ترقی کی رفتار بھی سب سے تیز تھی۔ ان کہنا تھا کہ جنوبی ایشیا میں پاکستان کی کرنسی سب سے زیادہ مضبوط تھی ۔جس طرح ہمارے دور حکومت میں ترقی ہوئی اگر اسی رفتار سے ملک ترقی کی راہ پر گامزن ہوتا توآج پاکستان بھی بھارت کی طرح جی 20 ممالک میں شامل ہوتے۔آج پاکستان جی 100میں بھی نہیں ہے۔جیو نیوز کے پروگرام ”کیپٹل ٹاک“میں گفتگو کرتے ہوئے میاں نواز شریف نے کہا کہ مسلم لیگ ن نے ”3Es“کا سلوگن دیا ہے جس میں انرجی ،ایجو کیشن اوراکنا می شامل ہیں ۔مسلم لیگ ن کے پاس تجر بہ کار لوگوں کی ٹیم ہے جنہوں نے پہلے بھی یہ کام کر کے دکھایا ہے۔ان کاکہنا تھا کہ اگرمسلم لیگ ن اقتدار میںآتی ہے تو اُنہیں حکومت چلانے کے لیے بریفنگ نہیں لینا پڑے گی کیونکہ اُن کے پاس تجربہ کار لوگ ہیںجنہیں اپنے فرائض انجام دینا آتے ہیں۔مسلم لیگ ن نے ایجنڈا تیار کر لیا ہے اوربر سر اقتدار ہو نے کے بعد پہلے دن سے اُس ایجنڈے پر کام شروع ہوجائے گا۔نواز شریف نے کہا کہ کچھ لوگ نوے دن میں کرپشن ختم کرنے کی باتیں کرتے ہیں ۔کسی بھی ملک میں نوے دن میں کرپشن ختم نہیں ہوتی۔انہوں نے کہا کہ اگر اُنہیں حکومت ملتی ہے تو وہ ٹیکس کی شرح کم کر یں گے تاکہ لوگوں کومشکلات کا سامنا نہ کر نا پڑے۔موجودہ حکومت 35فیصد کار پوریٹ ٹیکس کی مد میں لے رہی ہے جس کی وجہ سے بہت سے لوگ ٹیکس چوری جیسے غیر قانونی فعل میںملوث ہیں لیکن اگر اسی ٹیکس کو دس فیصد پر لیا تو سب لوگ باآسانی ٹیکس ادا کر سکتے ہیں۔ان کا کہنا تھا کہ پاکستان میںٹیکس سرکاری خزانوںمیں جانے کے بجائے لوگوں کی جیبوں میں جارہا ہے۔نواز شریف نے کہا کہ جنوبی ایشیا میں سب سے پہلے موٹر وے پاکستان میں بنی،سارک ممالک میں سب سے پہلے جدید ایئر پورٹس پاکستان میں بنے ،فائبر آپٹکس سب سے پہلے پاکستان میں آئی ۔ ان کا کہنا تھا کہ ہمارے اکنامک ریفارمز کی تقلید بھارت نے بھی کی اور وہ آج تک اس پر کام کررہے ہیں۔منموہن سنگھ نے بھی پاکستان کے اکنامک ریفارمز کی تعریف کی تھی ۔نواز شریف نے کہا کہ حکومت میں آنے کے بعد اخراجات کو کم کر نے کے لیے پہلے دن سے عمل کیا جائے گا۔نواز شر یف نے پی آئی اے کو خسارے سے نکالنے کے لیے تجویز د ی کہ نیو یارک میں پاکستانی ہوٹل ”روز ویلٹ“کوبیچ کر پی آئی اے کے قرضے اتار جائیںاور نئے جہاز خرید جائیں جن میں بہترین سروس ہو۔پی آئی اے وہ ادارہ ہے جس نے امریٹس اورسعودی ائیر لائینز کو کھڑا کیالیکن آج یہ خود سب سے پیچھے ہے۔نواز شریف نے بتایا کہ جب مشرف نے اُن کی حکومت کا تختہ پلٹا تب وہ بلٹ ٹرین اور انڈر گراﺅنڈ ریلوے کےپروجیکٹ پرکام کر نے لگے تھے اوراب حکومت میں آکر دو بار ہ اس منصوبے پر کام کیا جائے گا جس سے عوام کرچی سے پشاور صرف آٹھ گھنٹے میں پہنچے گی۔نواز شریف نے کہا کہ وہ اب پہلے سے زیادہ صاف گو ہوگئے ہیںاور وہ اب اقتدار سے زیادہ اقدار کی بات کرتے ہیں ۔

مزید : قومی