حکومت نے 24تنظیموں کو کھالیں اکٹھی کرنے کی اجازت دی ، کسی کالعدم تنظیم کو کیمپ نہیں لگانے دیں گے ، سی سی پی او

حکومت نے 24تنظیموں کو کھالیں اکٹھی کرنے کی اجازت دی ، کسی کالعدم تنظیم کو ...

 لاہور(کرائم سیل)سی سی پی او لاہور کیپٹن(ر)محمد امین وینس نے کہا ہے کہ حکومت کی جانب سے جن 24 تنظیموں یا فلاحی اداروں کوقربانی کی کھالیں اکھٹی کرنے کے لئے کیمپ لگانے کی اجازت دی گئی ہے ان کے علاوہ کسی بھی کالعدم تنظیم یا ادارے کو کسی صورت کھالیں اکھٹی کرنے یا اس کے لئے کیمپ لگانے کی ہرگز اجازت نہ دی جائے اور خلاف ورزی کرنے والوں کے خلاف فوری قانونی کارروائی عمل میں لائی جائے۔ انہوں نے مزید کہا کہ عید الضحیٰ پر سکیورٹی کو فول پروف بنانے کے لئے تمام دستیاب وسائل بروئے کار لائے جائیں ۔ خاص کر نماز عید کے اجتماعات کی سکیورٹی کے لئے A کیٹگری کی مساجد اور امام بارگاہوں کی سکیورٹی کے لئے ناصرف کمانڈوز تعینات کیے جائیں بلکہ ان عبادت گاہوں کے گرد موثر پٹرولنگ کو ہر صورت یقینی بنایا جائے اور ڈویژنل ایس پی اپنے علاقے کی حساس مساجد اور امام بارگاہوں کی سکیورٹی ڈیوٹی اور پٹرولنگ کو بذات خود چیک کریں ۔سی سی پی او نے کہا کہ اس بات پر بھی بالخصوص توجہ دی جائے کہ عید اجتماعات کے لئے پارکنگ سٹینڈز مساجد اور امام بارگاہوں سے کم از کم 100 گز فاصلے پر بنائے جائیں اور ان پارکنگ سٹینڈز پر پولیس اور رضا کاروں کو ضرور تعینات کیا جائے جو اس بات کو یقینی بنائیں کہ کوئی بھی گاڑی اور موٹر سائیکل بغیر چیکنگ کے پارکنگ میں کھڑی نہ ہو۔ ان خیالات کااظہار انہوں نے گزشتہ روز اپنے دفتر میں ایک ہنگاہی اجلاس کی صدارت کرتے ہوئے کیا ۔ جس میں ڈی آئی جی آپریشنز ڈاکٹر حیدر اشرف کے علاوہ تمام ڈویژنل ایس پیز بھی موجود تھے۔انہوں نے ایس پیز کو ہدایات دیتے ہوئے کہاکہ ہر ایس پی اپنے ڈویژن میں نماز عید کے بڑے اجتماعات کے ساتھ ساتھ حساس مساجد اور امام بارگاہوں پر لگائی جانے والی سکیورٹی ڈیوٹی کو بذات خود چیک کرے گا اور ڈیوٹی پر موجود اہلکاروں کو ان کی ڈیوٹی کے حوالے سے تفصیلی بریفنگ دے گا۔اس موقع پر ڈی آئی جی آپریشنز نے بریفنگ دیتے ہوئے بتایا کہ عید الضحیٰ پر سکیورٹی کے لئے 10 ہزار سے زائد پولیس افسران اور جوان فرائض سر انجام دیں گے ۔ انہوں نے مزید بتایا کہ حالات کی نزاکت کو دیکھتے ہوئے حساس مساجد اور امام بارگاہوں کی چھتوں پر بھی ماہر نشانہ باز سنائپرز تعینات کیے جا رہے ہیں تاکہ کسی بھی ناخوشگوار واقعہ کی پیش بندی کی جاسکے ۔ انہوں نے کہاکہ حکومت کی جانب سے جن تنظیموں اور فلاحی اداروں کو کھالیں اکٹھی کرنے اور کیمپ لگانے کی اجازت دی گئی ہے ان میں شوکت خانم کینسر اینڈ ریسرچ ہسپتال ، سہارا فار لائف ٹرسٹ ، ایدھی فاؤنڈیشن ،فاطمید فاؤنڈیشن،میڈی کےئر ٹرسٹ،فاؤنٹین ہاؤس، اے کیو خان ہسپتال ٹرسٹ، جامع نعیمیہ ، نور تھیلسیمیا فاؤنڈیشن ، الخدمت فاؤنڈیشن ،منہاج ویلفےئر فاؤنڈیشن،نگینہ سوشل ویلفےئر سوسائٹی،چشتیاں ویلفےئر سوسائٹی، گھرکی ٹرسٹ ٹیچنگ ہسپتال،رائزنگ سن ایجوکیشن ویلفےئر سوسائٹی، دعوت اسلامی، الشیخ دارلشفاء/ الشفاء ڈسپنسری،الخیبر فاؤنڈیشن ، انیس فاطمہ ٹرسٹ، اخوت فاؤنڈیشن ،الاحسان ویلفےئر آئی ہسپتال ، عبیر ویلفےئر ٹرسٹ ،مدرسہ خدام اہلسنت تعلم القرآن اور محمدی میڈیکل ٹرسٹ شامل ہیں لہذا ان24تنظیموں اور فلاحی اداروں کے علاوہ کسی بھی تنظیم یا ادارے کو کھالیں اکھٹی کرنے کے لئے کیمپ لگانے کی قطعی اجازت نہ دی جائے اور خلاف ورزی کی صورت میں قانونی کاروائی میں ذرہ بھر تاخیر نہ کی جائے ۔

مزید : علاقائی