منیٰ کا سانحہ ایک گروپ کی ہٹ دھرمی کا نتیجہ ہے: طاہر اشرفی

منیٰ کا سانحہ ایک گروپ کی ہٹ دھرمی کا نتیجہ ہے: طاہر اشرفی
منیٰ کا سانحہ ایک گروپ کی ہٹ دھرمی کا نتیجہ ہے: طاہر اشرفی

  


لاہور (ویب ڈیسک) پاکستان علماءکونسل کے سربراہ مولانا طاہر اشرفی نے کہا کہ منیٰ کا سانحہ انتہائی قابل افسوس ہے جو ایک گروپ کی ہٹ دھرمی کی وجہ سے ہوا، حجاج کے اس گروپ نے رمی کیلئے متبادل راستے سے جانے سے انکار کیا اور جب حاجیوں کا ایک ریلا آیا تو بھگڈر مچ گئی۔ نیوز چینل ایکسپریس کے پروگرام میں گفتگو کرتے ہوئے مولانا نے کہا کہ سعودی حکومت نے چند ہی گھنٹوں بعد معاملات کو پھر سے بحال کردیا ہے، دہشتگردوں کی طرف سے کہا جارہا تھا کہ ہم حج کے دوران بدنظمی پیدا کریں گے لیکن سعودی حکام نے ان کی کوششوں کو ناکام بنادیا ہے، عالم اسلام میں جس طرح کا اضطراب ہے اس کی وجہ سے مسلم امہ میں ڈسپلن نظر نہیں آتا، مسلم امہ شام سے لے کر کشمیر تک ذبح ہورہی ہے لیکن اس کے باوجود کیا کہیں کوئی آواز بلند ہورہی ہے؟ شام میں بشارالاسد کے مظالم کے خلاف کم سن بچیاں کھڑی ہیں، جب ہم ظلم کے سامنے خاموش ہوں گے تو پھر اللہ کی رحمت بھی نہیں ہوگی۔ ہمیں یہ تو نظر آتا ہے کہ حرم میں حادثات ہوگئے لیکن اپنے اعمال کو بھی دیکھنا چاہیے۔ ایک طرف ہم بیت اللہ کا غلاف پکڑتے ہیں تو اگلے ہی لمحے ہم اپنے بھائی کو کہنی مارتے ہیں۔ مسلم امہ متحد ہوکر کھڑی ہوگی تو پھر اللہ کی رحمت بھی ہوگی لیکنا گر ہم صرف اپنا گھر بچانے کی کوشش کریں گے تو پھر یاد رکھیں کہ صدام رہا نہ قذافی رہا۔

مزید : لاہور