آج اس شہر میں کل نئے شہر میں بس اسی لہر میں | حبیب جالب |

آج اس شہر میں کل نئے شہر میں بس اسی لہر میں | حبیب جالب |
آج اس شہر میں کل نئے شہر میں بس اسی لہر میں | حبیب جالب |

  

آج اس شہر میں کل نئے شہر میں بس اسی لہر میں

اُڑتے پتوں کے پیچھے اڑاتا رہا، شوقِ آوارگی

اس گلی کے بہت کم نظر لوگ تھے، فتنہ گر لوگ تھے

زخم کھاتا رہا مسکراتا رہا شوقِ آوارگی

کوئی پیغام گل تک نہ پہنچا مگر، پھر بھی شام و سحر

ناز بادِ چمن کے اٹھاتا رہا شوقِ آوارگی

کوئی ہنس کے ملے، غنچۂ دل کھلے، چاک دل کا سلے

ہر قدم پر نگاہیں بچھاتا رہا، شوقِ آوارگی

دشمنِ جاں فلک، غیر ہے یہ زمیں، کوئی اپنا نہیں

خاک سارے جہاں کی اڑاتا رہا  شوقِ آوارگی​

شاعر: حبیب جالب

(مجموعہ کلام: برگِ آوارہ؛سال اشاعت،1977)

Aaj   Iss   Shehr   Men    Kall    Naey   Shehr   Men   Bass   Isi    Lehr   Men

Urrtay   Patton   K   Peechhay   Urraata   Raha    Shaoq-e-Aawaargi 

Uss   Gali   K    Bahut   Kam   Nazar   Log   Thay   Fitna   Gar   Log   Thay

Zakhm   Khaata   Raha    Muskuraata    Raha   Shaoq-e-Aawaargi 

Koi    Paighaam   Gull   Tak   Na   Pahuncha    Magar   Phir   Bhi   Shaam -o-Sahar

Naaz   Baad-e-Chaman   K   Uthaata    Raha   Shaoq-e-Aawaargi 

Koi   Hans   Kar   Milay    Ghuncha -e-Jaan     Khilay   Chaak   Dil   Ka   Silay

Har   Qadam   Par   Nigaahen   Bichaata     Raha    Shaoq-e-Aawaargi 

Dushman-e-Jaan    Falak  ,   Ghair   Hay   Yeh    Zameen  ,   Koi    Apna   Nahen

Khaak    Saray    Jahaan   Ki   Urraata    Raha   Shaoq-e-Aawaargi 

Poet: Habib   Jalib

 

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -