یہ اور بات تیری گلی میں نہ آئیں ہم  | حبیب جالب |

یہ اور بات تیری گلی میں نہ آئیں ہم  | حبیب جالب |
یہ اور بات تیری گلی میں نہ آئیں ہم  | حبیب جالب |

  

یہ اور بات تیری گلی میں نہ آئیں ہم 

لیکن یہ کیا کہ شہر ترا چھوڑ جائیں ہم 

مدت ہوئی ہے کوئے بتاں کی طرف گئے 

آوارگی سے دل کو کہاں تک بچائیں ہم 

شاید بہ قید زیست یہ ساعت نہ آ سکے 

تم داستانِ شوق سنو اور سنائیں ہم 

بے نور ہو چکی ہے بہت شہر کی فضا 

تاریک راستوں میں کہیں کھو نہ جائیں ہم 

اس کے بغیر آج بہت جی اداس ہے 

جالبؔ چلو کہیں سے اسے ڈھونڈ لائیں ہم 

شاعر: حبیب جالب

(مجموعہ کلام: برگِ آوارہ؛سال اشاعت،1977)

Yeh    Aor   Baat   Teri   Gali   Men   Na   Aaen   Ham

Lekin   Yeh   Kaya   Keh   Shehr   Tira   Chorr   Jaaen    Ham

Muddat   Hui   Hay   Koo-e- Butaan   Ki   Taraf    Gaey

Aawaargi   Say   Dil   Ko   Kahan Tak   Bachaaen   Ham

Shayad   Ba Qaid -e-Zeest   Yeh   Saat   Na   Aa   Sakay

Tum   Daastaan-e-Shaoq    Suno   Aor   Sunaaen   Ham

Be   Noor   Ho   Chuki   Hay   Bahut   Shehr   Ki   Fazaa

Tareek   Raaston   Men   Kahen   Na   Kho   Jaaen   Ham

Uss   K   Baghir   Aaj   Ji   Babhut   Udaas   Hay 

JALIB    Chalo   Kahen   Say   Usay   Dhoond   Laaen   Ham

Poet: Habib   Jalib

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -