پھر کبھی لوٹ کر نہ آئیں گے  | حبیب جالب |

پھر کبھی لوٹ کر نہ آئیں گے  | حبیب جالب |
پھر کبھی لوٹ کر نہ آئیں گے  | حبیب جالب |

  

پھر کبھی لوٹ کر نہ آئیں گے 

ہم ترا شہر چھوڑ جائیں گے 

دور افتادہ بستیوں میں کہیں 

تیری یادوں سے لو لگائیں گے 

شِمع ماہ و نجوم گل کر کے 

آنسوؤں کے دیئے جلائیں گے 

آخری بار اک غزل سن لو 

آخری بار ہم سنائیں گے 

صورتِ موجۂ ہوا جالبؔ 

ساری دُنیا کی خاک اڑائیں گے 

شاعر: حبیب جالب

(مجموعہ کلام: برگِ آوارہ؛سال اشاعت،1977)

Phir   Kabhi   Laot   Kar   Na   Aaen   Gay

Ham   Tira   Shehr   Chorr    Jaaen   Gay

Door   Uftaada    Bastiun    Men    Kahen

Teri   Yaadon   Say    Lao    Lagaaen   Gay

Shama-e- Mah-e-Nujoom    Gull    Kar   K

Aansuon   K   Diay   Jalaaen   Gay

Aakhri    Baar     Ik     Ghazal   Sun    Lo

Aakhri    Baar    Ham    Sunaaen    Gay

Soorat -e-Maoja-e- Hawaa    JALIB

Saari    Dunya    Ki    Khaak    Urraaen   Gay

Poet: Habib   Jalib

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -