کوئی سوال نہ کوئی جواب دل میں ہے  | خورشید رضوی |

کوئی سوال نہ کوئی جواب دل میں ہے  | خورشید رضوی |
کوئی سوال نہ کوئی جواب دل میں ہے  | خورشید رضوی |

  

کوئی سوال نہ کوئی جواب دل میں ہے 

بس ایک درد و الم کا سحاب دل میں ہے 

جراحتیں جو لگیں تن پہ زیبِ تن کر لیں 

جو دل کے زخم تھے ان کا حساب دل میں ہے 

اگر لہو ہے تو آنکھوں میں کیوں نہیں آتا 

یہ موجِ خوں ہے کہ موجِ سراب دل میں ہے 

مدام ظاہر و باطن میں یہ خلیج رہی 

نگاہ غرقِ گنہ احتساب دل میں ہے 

صحیفۂ الم روزگار ہاتھوں میں 

کھلی ہوئی ترے غم کی کتاب دل میں ہے 

نظر کے سامنے اٹھیں گے روز حشر مگر 

وہ دل میں دفن رہے گا جو خواب دل میں ہے 

اگر جگر میں ہو سارے جہاں کا درد تو خیر 

یہ کیا کہ سارے جہاں کا عذاب دل میں ہے 

شاعر: خورشیدرضوی

(یکجاٰ، کلیات: سالِ اشاعت، دوم،2012)

Koi   Sawaal   Na   Koi    Jawaab   Dil   Men   Hay 

Bss   Aik    Dard-o-Alam   Ka     Sahaab   Dil   Men   Hay 

Jaraahten    Jo   Lagen   Tan    Pe    Zeb-e-Tan    Kar   Len

Jo   Dil    K    Zakhm   Thay   Un    Ka   Hisaab   Dil   Men   Hay 

Agar    Lahu    Hay    To    Aankhon   Men    Kiun   Nahen   Aata

Yeh    Maoj-e- Khoon    Hay    Keh    Maoj-e- Saraab    Dil   Men   Hay 

Madaam    Zaahir -o- Baatin    Men    Yeh   Khaleej

Nigaah    Gharq-e- Gunah  ,   Ehtasaab   Dil   Men   Hay 

Saheefa-e-Alam-e- Rozgaar    Hathon    Men

Khuli    Hui   Tiray   Gham   Ki    Kitaab   Dil   Men   Hay 

Nazar   K    Saamnay   Uthen   Gay    Roz -e- Hashr   Magar

Wo    Dil    Men    Dafn     Rahay    Ga   Jo   Khaab   Dil   Men   Hay 

Agar    Jigar   Men    Ho    Saaray    Jahaan   K a   Dard   To   Khair

Yeh    Kaya    Keh    Saaray    Jahaan   Ka    Azaab   Dil   Men   Hay 

Poet: Khursheed    Rizvi

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -