رہینِ صد گماں بیٹھے ہوئے ہیں | خورشید رضوی |

رہینِ صد گماں بیٹھے ہوئے ہیں | خورشید رضوی |

  

رہینِ صد گماں بیٹھے ہوئے ہیں

مگر ہم رائگاں بیٹھے ہوئے ہیں

بظاہر ہیں بھری محفل میں لیکن

خداجانے کہاں بیٹھے ہوئے ہیں

اِدھر صحنِ چمن میں مجھ سے کچھ دُور

وہ مجھ سے سرگراں بیٹھے ہوئے ہیں

اُدھر شاخِ شجر پر دو پرندے

مثالِ جسم و جاں بیٹھے ہوئے ہیں

ستارے ہیں کہ صحرائے فلک میں

بھٹک کر کارواں بیٹھے ہوئے ہیں

کنویں کی تہ میں جھانکو عکس در عکس

یہاں سات آسماں بیٹھے ہوئے ہیں

کھنچی ہیں دل پہ پتھر   کی لکیریں

نقوشِ رفتگاں بیٹھے ہوئے ہیں

ہمیں چا ہو، ہماری قدر کر لو

تمہارے درمیاں بیٹھے ہوئے ہیں

شاعر: خورشید رضوی

(یکجاٰ، کلیات: سالِ اشاعت، دوم،2012)

Raheen-e- Sad   Gumaan   Bathay    Huay   Hen

Magar   Ham   Raigaan   Bathay    Huay   Hen

 Bazaahir   Hen    Bhari    Mehfill    Men   Lekin

Khuda   Jaanay   Kahan   Bathay    Huay   Hen

Idhar   Sehn-e-Chaman   Men   Mujh   Say   Kuch   Door

Wo   Mujh   Say   Sar    Garaan   Bathay    Huay   Hen

Udhar   Shaakh-e- Shajar   Par   Do   Parinday

Misaal-e- Jism -o- Jaan   Bathay    Huay   Hen

Sitaaray    Hen   Keh   Sehra-e- Falak    Men

Bhatak    Kar    Kaarwaan    Bathay    Huay   Hen

Kunwen    Ki    Teh    Men   Jhaanko   Aks   Dar   Aks

Yahan    Saat   Asmssn    Bathay    Huay   Hen

Khinchi   Hen   Dil   Pe    Pathar    Ki   Lakeeren

Naqoosh-e- Raftagaan    Bathay    Huay   Hen

Hamen    Chaaho    Hamari   Qadr    Kar   Lo 

Tumhaaray    Darmiyaan    Bathay    Huay   Hen

Poet: Khursheed   Rizvi

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -سنجیدہ شاعری -