طلب ہوتی ہے کم لیکن زیادہ مانگ لیتے ہیں | حسن عباس رضا |

طلب ہوتی ہے کم لیکن زیادہ مانگ لیتے ہیں | حسن عباس رضا |
طلب ہوتی ہے کم لیکن زیادہ مانگ لیتے ہیں | حسن عباس رضا |

  

طلب ہوتی ہے کم لیکن زیادہ مانگ لیتے ہیں

ہم ایسے تھڑدِلے کیوں غم کشادہ مانگ لیتے ہیں

جب اپنی یر غمالی خواہشیں واپس نہیں ملتیں

تو ڈھلتی عمر سے اک اور وعدہ مانگ لیتے ہیں

ہماری گفتگو رمز و کنایہ میں نہیں ہوتی

ہمیں جو مانگنا ہو سیدھا مانگ لیتے ہیں

کھلی شطرنج پر جب آتاہے فرس نرغے میں

تو بزدل اپنے دشمن سے پیادہ مانگ لیتے ہیں

کبھی توہم بھرے ساغر اُلٹ دیتے ہیں وحشت میں

کبھی وحشت کے بدلے دُردِبادہ مانگ لیتے ہیں

شاعر: حسن عباس رضوی

(شعری مجموعہ:خواب عذاب ہوئے؛ سالِ اشاعت1985)

Talab   Hoti   Hay   Kam   Lekin    Ziaada    Maang   Letay   Hen

Ham   Aisay   Thurr  Dilay    Kiun   Gham   Kushaada    Maang    Letay   Hen

Jab   Apni    Yarghamaali   Khaahishen   Waapas   Nahen   Milten

To   Dhalti   Umr   Say   Ik   Aor   Waada    Maang   Letay   Hen

Hamaari   Guftagu   Ramz-o- Kiaaya   Men   Nahen   Hoti

Hamen   Jo    Maangna   Ho   Seedha     Maang     Letay   Hen

Khuli   Shatranj    Par    Jab    Bhi   Faras    Aata   Hay   Narghay   Men

To    Buzdil    Apnay   Dushman   Say   Payaada    Maang     Letay   Hen

Kabhi   To   Ham   Bharay   Saaghar   Ulat    Detay   Hen   Wehshat   Men

Kabhi   Ham   Wehshat   K   Badlay   Dur-e- Baada   Maang   Letay   Hen

Poet: Hasan   Abbas   Raza

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -