آوارگی میں حد سے گزر جانا چاہیے | حسن عباس رضا |

آوارگی میں حد سے گزر جانا چاہیے | حسن عباس رضا |
آوارگی میں حد سے گزر جانا چاہیے | حسن عباس رضا |

  

آوارگی میں حد سے گزر جانا چاہیے

لیکن کبھی کبھار تو گھر جانا چاہیے

اس بت سے عشق کیجیے لیکن کچھ اس طرح

پوچھے کوئی تو صاف مکر جانا چاہیے

مجھ سے بچھڑ کے ان دنوں کس رنگ میں ہے وہ

یہ دیکھنے رقیب کے گھر جانا چاہیے

جس شام شاہزادی فقیروں کے گھر میں آئے

اُس شام وقت کو بھی ٹھہر جانا چاہیے

ربِّ وصال، وصل کا موسم تو آچکا

اب تو مرا نصیب سنور جانا چاہیے

جب ڈوبنا ہی ٹھہرا تو پھر ساحلوں پہ کیوں

اس کے لیے تو بیچ بھنور جانا چاہیے

بیٹھے رہو گے دشت میں کب تک حسن رضا

پاؤں میں جاگ اٹھا ہے سفر جانا چاہیے

شاعر: حسن عباس رضا

(شعری مجموعہ:خواب عذاب ہوئے؛ سالِ اشاعت1985)

Awaargi   Men   Hadd   Say   Guazar    Jaana   Chaahiay

Lekin   Kabhi    Kabhaar  To   Ghar   Jaana   Chaahiay

Uss   But    Say    Eshq   Kijiay    Lekin   Kuchh   Iss Tarah

Poochhay   Koi   To   Saaf     Mukar   Jaana   Chaahiay

Mujh   Say    Bichharr   K    In    Dinon   Kiss   Rang   Men   Hen Wo

Yeh   Daikhany   Raqeeb   K   Ghar   Jaana   Chaahiay

Jiss   Shaam   Shaahzadi    Faqeeron   K   Ghar   Men   Aaey

Uss   Shaam   Waqt   Ko   Bhi   Thahar   Jaana   Chaahiay

Rabb-e-Visaal   Wasl   Ka   Maosmam    Bhi   Aa   Chuka

Ab   To   Mira   Naseeb   Sanwar    Jaana   Chaahiay

Jab   Doobna   Hi    Thehra    To   Saahilon    Pe   Kiun

Iss    K    Liay   To    Beech    Bhanwar    Jaana   Chaahiay

Baithay    Raho    Gay   Dasht    Men    Kab    Tak    HASAN    RAZA

Paaon    Men    Jaag    Utha    Hay    Safar  ,   Jaana   Chaahiay

Poet: Hasan     Abbas    Raza

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -سنجیدہ شاعری -غمگین شاعری -