دے ہاتھ میں سوہنا ہاتھ کہ سجری سیج سجے | حسن عباس رضا |

دے ہاتھ میں سوہنا ہاتھ کہ سجری سیج سجے | حسن عباس رضا |
دے ہاتھ میں سوہنا ہاتھ کہ سجری سیج سجے | حسن عباس رضا |

  

دے ہاتھ میں سوہنا ہاتھ کہ سجری سیج سجے

پھیر چھیڑ ملن کی بات کہ سجری سیج سجے

میرے داتا ہجر کی گھڑیاں ہم پر قہر ہوئیں

اب مہر کی ہو برسات کہ سجری سیج سجے

مجھے یاد ہے اس نے آخری خط میں یہ پوچھا تھا

کب آئے گی وصل کی رات کہ سجری سیج سجے

اک خواہش نیم کھلے دروازے میں جاگی 

کوئی دم توڑ کے بارات،کہ سجری سیج سجے

شہزادی مانگ دعا اس رنگلے موسم کی 

ہم جس میں کھِلیں اک ساتھ کہ سجری سیج سجے

شاعر: حسن عباس رضا

(شعری مجموعہ:خواب عذاب ہوئے؛ سالِ اشاعت1985)

Day   Haath   Men    Sohna    Haath   Keh   Sajri   Saij   Sajay

Phir   Chairr    Milan   Ki    Baat    Keh   Sajri   Saij   Sajay

Meray    Daata   Hijr   Ki   Gharriyaan   Ham   Par   Qehr   Huen

Ab   Mehr  Ki   Ho   Barsaat   Keh   Sajri   Saij   Sajay

Mujhay   Yaad   Hay   Uss   Aakhri   Khat   Men   Yeh   Poochha   Tha

Kab   Aaey   Gi   Wasl   Ki   Raat   Keh    Sajri   Saij   Sajay

Ik   Khaahish   Neem    Khulay   Darwaazay   Men   Jaagi 

Koi   Dam   Torr   K   Baraat   ,  Keh    Sajri   Saij   Sajay

Shahzaadi   Maang   Dua   Uss   Ranglay   Maosam   Ki

Ham    Jiss   Men   Khilen   Saath  ,  Keh    Sajri   Saij   Sajay

Poet: Hasan   Abbas   Raza

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -سنجیدہ شاعری -