سینیٹ، حکمرانوں نے ملک کو رونددیا اپوزیشن عمران اکیلے تبدیلی کے ٹھیکیدار نہیں: حکومتی ارکان 

سینیٹ، حکمرانوں نے ملک کو رونددیا اپوزیشن عمران اکیلے تبدیلی کے ٹھیکیدار ...

  

اسلام آباد(آئی این پی) سینیٹ میں اپوزیشن نے افغانستان کے مسئلے پر بحث کے لئے پارلیمنٹ کا مشترکہ اجلاس بلانے کا مطالبہ کردیا، اپوزیشن ارکان حکومت پر تنقید کرتے ہوئے کہا کہ  اس وقت حکومت کسی ریفارم ایجنڈا پر سنجیدہ نہیں ہے، پاکستان نے اپنی پوری تاریخ میں اتنی گندم کبھی درآمد نہیں کی ، گندم اور چینی کی55فیصد درآمد بڑھی ہے، اس وقت سب پریشان ہیں کہ ملک ایسی جگہ جا رہا ہے کہ ہم اس کو  پھر واپس نہیں لا سکیں گے، آپ نے ملک کو بالکل روند کر رکھ دیا، کسی کے پاس کھانے کو نہیں ہے جبکہ  وزیر مملکت برائے پارلیمانی امور علی محمد خان اور حکومتی سینیٹرز نے کہا ہے کہ اگر سارا انصاف عمران خان نے کرنا ہے، ساری تبدیلی عمران  خان نے لے کہ آنی ہے سارا سسٹم ہم نے آکر ٹھیک کرنا ہے   تو آپ45پچاس سال کیا بیچتے رہے، کیا کرتے رہے،کیا عمران  خان ٹھیکیدار ہے؟بڑے بڑے عہدوں پر تو آپ بیٹھے رہے، تھری پیس سوٹ لگا کر آجاتے ہیں،کوویڈ کے دوران ساڑھے  پانچ کروڑ کے قریب نوکریاں متا ثرہوئیں  آج دوبارہ وہ  لوگ اپنی نوکریوں پر لگ چکے ہیں،کوویڈ کے دوران ہماری حکومت نے سمارٹ لاک ڈاؤن کا کنسپٹ دیا، ہم نے کنسٹرکشن انڈسٹری کو بند نہیں ہونے دیا، اس سال گندم کی یکارڈ پیداوار ہوئی ہے،  پی آئی اے کو منافع بخش بنانے میں وقت لگے گا، تین سال کے اندر ہم نے خسارے میں بتدریج کمی کی ہے۔جمعہ کو سینیٹ کا اجلاس چیئرمین سینیٹ صادق سنجرانی کی صدارت میں ہوا، اجلاس کے دوران20اگست 2020کو پارلیمنٹ کے مشترکہ اجلاس سے  صدر کے خطاب پر بحث سمیٹتے ہوئے وزیر مملکت برائے پارلیمانی امور علی محمد خان نے کہا کہ صدر کی تقریر کی طرف پوری دنیا دیکھتی ہے، پوری دنیا پاکستان کی طرف دیکھ رہی ہے،غریب آدمی کو عمران خان نے پناہ گاہ دی، میں اکثر میڈیا میں بھی یہ سوال رکھتا ہوں کہ  اگر سارا انصاف عمران خان نے کرنا ہے، ساری  تبدیلی عمران خان نے لے کہ آنی ہے،سارا سسٹم ہم نے آکر ٹھیک کرنا ہے   تو آپ45پچاس سال کیا بیچتے رہے، کیا کرتے رہے،کیا عمران  خان ٹھیکیدار ہے؟ بڑے بڑے عہدوں پر تو آپ بیٹھے رہے، تھری پیس سوٹ لگا کر آجاتے ہیں، پاکستان پیپلز پارٹی کی سینیٹر  شیری  رحمان نے کہا کہ اس وقت حکومت کسی ریفارم ایجنڈا پر سنجیدہ نہیں، پاکستان نے اپنی پوری تاریخ میں اتنی گندم کبھی درآمد نہیں کی ، گندم اور چینی کی55فیصد درآمد بڑھی ہے۔سینیٹ کو حکومت کی جانب سے وفاقی وزیر برائے ایوی ایشن ڈویژن غلام سرور خان نے آگاہ کیا ہے کہ پی آئی اے کے خسارے میں اضافے کے بجائے کمی نوٹ کی گئی ہے، 2018میں پی آئی اے کو 67327ملین روپے کا خسارہ ہوا، 2019میں 52602ملین جبکہ 2020میں 34643ملین کا خسارہ ہوا، خسارہ تو ہمیں ورثے میں ملا ہے،،پی آئی اے پر پابندیاں اسی سال ختم ہو جائیں گی، جون 2021تک سونامی بلین ٹری پراجیکٹ کے تحت لگائے گئے کل پودوں کی تعداد ایک ارب 70لاکھ ہے،   خیبر پختونخوا میں 39کروڑ،  بلوچستان میں 61لاکھ، پنجاب میں 6کروڑ 86لاکھ، سندھ میں 40کروڑ83لاکھ پودے لگائے گئے، آزادکشمیر میں 11کروڑ جبکہ گلگت بلتستان میں 2کروڑ 23لاکھ پودے لگائے گئے،  بلوچستان میں بھی درختوں کی تعداد بڑھے گی

سینیٹ 

مزید :

صفحہ آخر -