ایف بی آر کی پالیسیاں نامنظور،احتجاج کا دائر ہ وسیع، تاجر

ایف بی آر کی پالیسیاں نامنظور،احتجاج کا دائر ہ وسیع، تاجر

  

ڈیرہ غازیخان (سٹی رپورٹر) مرکزی انجمن تاجران کے ضلعی صدر شیخ محمد نقیب،سٹی صدر سردار جان عالم خان لغاری،جنرل سیکرٹریز جاوید اسحاق مستوئی، طارق اسماعیل قریشی، سرپرست اعلیٰ الحاج شیخ محمد علی، مرکزی سینئر نائب صدرحاجی محمد زبیر نظامی، چیئر مین مجلس عاملہ(بقیہ نمبر51صفحہ7پر)

 حاجی رانا نذیر احمد،وائس چیئر مین میاں محمد ایوب،سیکرٹری انفارمیشن خرم اسحاق مستوئی،سیکرٹری فنانس اویس شکور، شیخ عبدالمنان اور سٹی سینئر نائب صدر سجاد کریم رند،نائب صدور حاجی محمد حسین،شیخ محمد حنیف،سیکرٹری انفارمیشن شیخ طاہرمعراج،سیکرٹری فنانس حاجی لطیف سپل،اراکین کاشف یونس خان،عبد الصمد قریشی،مرزا محمد ایوب،اعجاز احمد قریشی کے علاوہ صرافہ ایسوسی ایشن کے سرپرست آصف صدیق آرائیں، صدر صرافہ صفدر خٹک، لوہا مارکیٹ کے دین محمد خوجہ،فرنیچر مارکیٹ کے موسی بھٹی، شیخ محمد ریاض،طارق خلجی،شیخ محمد بلال،محمد وقاص،زاہد نظام،ٹریول ٹریڈ کے حافظ سیف اللہ پتافی،ملک عبد العزیز، رانی بازار کے صدر فاروق احمد بھولا،ٹیوب ویل مارکیٹ کے صدر چوہدری خالدریاض،اردو بازار کے صدر محمد ایوب خان لودھی و دیگر رہنماؤں نے ہنگامی اجلاس کے بعد مشترکہ جاری کردہ بیان میں کہا ہے کہ ایف بی آر کی حالیہ پالیسیوں اور مہنگائی کے خلاف تاجر برادری احتجاج اور دھرنوں پر مجبور ہوگئے ہے تاجر تنظیموں کے نمائندوں نے کہا کہ ایف بی آر کی طرف سے مختلف کاروبار پر پوائنٹ آف سیلز ڈیوائس لگانے کی اسکیم عملا ناکام ہو چکی ہے جن اداروں میں ڈیوائس نصب ہو چکی ہے ان کے کاروبار میں کمی ہوئی ہے گاہک جانتے ہیں کہ ایسی دکانوں سے خریداری سے ان کا تمام ریکارڈ ایف بی آر کے پاس منتقل ہو جاتا ہے جس سے مستقبل میں ان کے لئے مشکلات پیدا ہو سکتی ہیں اب شناختی کارڈ طلب کرنے کی ضرورت نہیں خریدار کا تمام ڈیٹا خود بخود منتقل ہوجا ئے گا یہی وجہ ہے کہ ایسی دکانیں یا ادارے جن پر ڈیوائسز لگ چکی ہیں ان کی سیل میں واضح کمی ہو رہی ہے آئندہ چند روز میں ایف بی آر ایسی دکانوں سے خریداری کرنے والوں کے لئے انعامی اسکیم متعارف کروانے جا رہا ہے شیخ محمد نقیب نے مزید کہا کہ دکانوں پر ڈیوائس لگانے کا مطلب ہے ان کے کاروبار پر قبضہ کرنا اور معلومات حاصل کرنا اس سے کاروباری راز بھی منتقل ہو جائیں گے اور معلومات کو کسی بھی موقع پر استعمال کیا جا سکے گا یہ تمام ایجنڈا آئی ایم ایف کا ہے اس سے بہتر ہے کہ فکس ٹیکس یا خود تشخیصی نظام اپنایا جا ئے اس سلسلہ میں کسی بھی مرحلے پر حکومت یا ایف بی آر نے تاجر برادری سے مشاورت نہیں کی جس کی وجہ سے بد اعتمادی کی فضاء قائم ہے انہوں نے کہا کہ اب تو ایف بی آر اہلکار گلی محلوں کی چھوٹی چھوٹی دکانوں پر بھی جا رہے ہیں اور سیلز ٹیکس میں زبردستی رجسٹر کر رہے ہیں تمام دکاندار اتنے تعلیم یافتہ نہیں کہ وہ ہر ماہ ریٹرن فائل کریں فیکٹریوں کی سطح پر سیلز ٹیکس وصول کیا جانا چاہئے جہاں ایف بی آر آسانی سے مانیٹرنگ کر سکتا ہے انہوں نے وزیر خزانہ شوکت ترین سے مطالبہ کیا ہے کہ پی او ایس کے فیصلے پر نظر ثانی کی جائے ورنہ تاجر برادری اسلام آباد میں دھرنا اور احتجاج پر مجبور ہوگی۔

تاجر

مزید :

ملتان صفحہ آخر -