بہو کے قتل کا کیس، سینئر صحافی ایاز امیر ایک روزہ ریمانڈ پر پولیس کے حوالے

بہو کے قتل کا کیس، سینئر صحافی ایاز امیر ایک روزہ ریمانڈ پر پولیس کے حوالے
بہو کے قتل کا کیس، سینئر صحافی ایاز امیر ایک روزہ ریمانڈ پر پولیس کے حوالے

  

 اسلام آ باد (آئی این پی ) سینیر صحافی ایاز امیر کو  بہو   کے قتل کیس میں اسلام آباد کی مقامی عدالت  نے  ایک روزہ جسمانی ریمانڈ  پر پولیس کے حوالے کر دیا ہے ،دوران سماعت ایاز امیر کا کہنا تھا کہ شادی سے قبل میں نے بہو سے پوچھا تھا کہ کیا آپ کو معلوم ہے کہ شاہنواز پہلے سے شادی شدہ ہے ، کیا آپ کو اس کے نشے کا معلوم ہے جس پر سارہ نے کہا تھا  کہ شاہ نواز امیر دل کا بہت اچھا ہے۔

تفصیلات کے مطابق سارہ انعام قتل کیس میں سینئر صحافی ایاز امیر کو ڈیوٹی جج ایسٹ زاہد ترمذی کی عدالت میں پیش کیا گیا،   کمرہ عدالت میں سماعت کے دوران وکیل صفائی نے کہا کہ ایاز امیر کا نام ایف آئی آر میں نامزد نہیں، میرے موکل کے خلاف کوئی ثبوت بھی نہیں ہے،  اس پر پولیس افسران نے کہا کہ ہائی پروفائل کیس ہے، ملزم کو شامل تفتیش کرنا ہے،قتل کے واقعے کی اطلاع ایاز امیر نے ہی دی تھی۔

ایاز امیر نے کمرہ عدالت میں جج سے بولنے کی استدعا بھی کی، جس پر جج نے انہیں روسٹرم پر بلا لیا، عدالت کے روبرو ایاز امیر نے کہا کہ آئی جی اسلام آباد کو کال کر کے خود واقعے کے بارے میں بتایا،پولیس کو فارم ہاس کا ایڈریس بتایا، مجھے ہی گرفتار کرلیا گیا، انہوں نے یہ بھی کہا کہ شادی سے قبل ہی سارہ کو شاہنواز کی 2 شادیوں کا بتا دیا تھا، بہو سارہ کو یہ بھی بتایا تھا کہ شاہنواز نشے کا عادی ہے،دوران سماعت پولیس کی جانب سے عدالت سے جسمانی ریمانڈ کی استدعا کی گئی ،عدالت نے کچھ دیر فیصلہ محفوظ رکھنے کے بعد ایاز امیر کا ایک روزہ جسمانی ریمانڈ منظور کرتے ہوئے پولیس کے حوالے کرنے کا حکم دے دیا۔

عدالتی حکم میں پولیس کو ملزم کا میڈیکل کرانے کی ہدایت اور آئندہ سماعت پر میڈیکل اور تفتیشی رپورٹ بھی طلب کرلی ہے،اسلام آباد پولیس نے ایاز امیر کو بہو کے قتل کے مقدمے میں نامزد کیا ہے۔ مقدمے اب 302 کے ساتھ دفعہ 109 بھی شامل کی گئی ہے، مقدمے میں ایاز امیر کی اہلیہ کو بھی نامزد گیا گیا ہے تاہم تاحال انہیں گرفتار نہیں کیا جاسکا ہے۔

عدالت آمد پر میڈیا کے سوالات کے جواب میں ایاز امیر کا کہنا تھا کہ ہمارا عدالتی نظام بہت مضبوط ہے اور مجھے عدالتوں کے فیصلے پر یقین ہے،میں نے خود پولیس کو اطلاع دی، ایس ایچ او کو فارم ہاوس کا پتا تک میں نے دیا۔

مزید :

اہم خبریں -قومی -