کھلاڑیوں کی سلیکشن میں صرف میرٹ میری ترجیح ہوگی

کھلاڑیوں کی سلیکشن میں صرف میرٹ میری ترجیح ہوگی

لاہور (اے پی پی) قومی سلیکشن کمیٹی کے رکن اور سابق ٹیسٹ کرکٹر اعجاز احمد نے کہا ہے کہ پی سی بی کے چیئر مین نجم سیٹھی نے انہیں سلیکشن کمیٹی میں شامل کرکے جس اعتماد کا اظہار کیا ہے میں اس پر پورا اترنے کی بھرپور کوشش کروں گا ۔ جمعہ کے روزقذافی سٹیڈیم لاہور میں اے پی پی سے خصوصی گفتگو کرتے ہوئے انہوں نے کہاکہ کھلاڑیوں کی سلیکشن میں صرف اور صرف میرٹ میری ترجیح ہوگی ۔کسی دباﺅ کو خاطر میں نہیں لاﺅں گا ۔میں پہلے بھی دو دفعہ سلیکشن کمیٹی کا رکن رہ چکاہوں اور اصولوں پر سمجھوتہ نہ کرنے کے باعث میں نے استعفی دیدیا تھا ۔چیف سلیکٹر معین خان کے ساتھ کافی عرصہ کرکٹ کھیل چکاہوں اور میری ان کے ساتھ کافی انڈر سٹینڈنگ ہے ۔معین خان بھی میرٹ پر کوئی سمجھوتہ نہیں کرتے ۔ وقار یونس کو ہیڈ کوچ بنائے جانے کی اطلاعات کے بارے میں ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہاکہ وقار یونس ایک تجربہ کار کرکٹر اور کوچ ہیں ۔میں اور معین خان ان کے ساتھ کرکٹ کھیل چکے ہیں اور ان کے ہیڈکوچ بننے سے ہمارے درمیان اچھی انڈر سٹینڈنگ ہوگی ۔چیف سلیکٹر معین خان کے قومی ٹیم کے ساتھ بطور مینجر کام کرنے سے ٹیم کی پرفارمنس پر کافی اچھا اثر پڑے گا ۔وہ ٹیم کی کارکردگی کا میچ کے دوران بہتر طریقے سے جائزہ لے سکیں گے اور کھلاڑی بھی بہتر پرفارمنس کا مظاہرہ کرنے کی بھرپور کوشش کریں گے۔

عجاز احمد نے کہاکہ پاکستان میں کرکٹ کے ٹیلنٹ کی کوئی کمی نہیں ہے تاہم ٹیلنٹ کی صلاحیتوں میں نکھار لانے کے لئے انہیں مزید متحرک کرنے کی ضرورت ہے ۔ریجنز میں کھلاڑیوں کی سلیکشن کے دوران قومی سلیکشن کمیٹی کے اراکین موجود ہوں تو وہ سلیکشن میں کسی کے ساتھ زیادتی نہیں ہونے دیں گے ۔ان پر چیک اینڈ بیلنس ہوگا ۔ریجنز میں کھلاڑیوں کی سلیکشن میں میرٹ کی خلاف ورزی کی شکایت سامنے آتی رہتی ہیں ۔جبکہ میچ کے دوران اچھے رنز بنانے والا کھلاڑی اگلے میچ میں ٹیم کا ©حصہ نہیں ہوتا جو کہ بہت زیادتی کی بات ہے۔ اعجاز احمد نے کہاکہ سلیکشن کمیٹی کے ساتھ ساتھ میں نیشنل اکیڈمی میںفیلڈنگ کوچ کے فرائض بھی سر انجام دیتا رہوں گا ۔انہوں نے کہاکہ ٹیم میں نیا ٹیلنٹ لانے کے لئے سلیکٹر کو کم ازکم دو سال کا موقع ملے تو اس کے مثبت نتائج سامنے آئیں گے۔

مزید : میٹروپولیٹن 3


loading...