نائیجیریا میں بچے بنانے والی فیکٹریاں پکڑی گیں

نائیجیریا میں بچے بنانے والی فیکٹریاں پکڑی گیں
born

  


انوگو (نیوزڈیسک) حضرتِ انسان جب بدی پر مائل ہو تو کیسے کیسے گھناﺅنے جرائم کا مرتکب ہوجاتا ہے۔ اس کی ایک تازہ مثال ایسے ”کارخانوں“ کا سامنے آنا ہے کہ جہاں انسانوں کے بچے پیدا کرکے دھڑا دھڑ فروخت کئے جارہے ہیں۔ نائجیریا کی پولیس نے ایسے نام نہاد ”طبی مرکز“ کا سراغ لگایا ہے۔ جہاں عورتوں کو محض اس مقصد کیلئے رکھا جاتا ہے کہ وہ بچہ پیدا کریں تاکہ اسے فروخت کردیا جائے۔ پولیس نے جب ایک ایسے ہی طبی مرکز پر چھاپہ مارا تو وہاں ایک 74 سالہ مشکوک ڈاکٹر موجود تھا جس پر نومولود بچوں کو فروکت کرنے کا الزام ہے۔ پولیس اس ”طبی مرکز“ تک تین ماہ کے خفیہ آپریشن کے بعد پہنچی، قانون نافذ کرنے والے اداروں نے بچہ خریدنے والے لوگوں کے بہروپ میں ”طبی مرکز“ سے رابطہ کیا اور وہاں جاری خوفناک جرم کی تفصیلات حاصل کرلیں۔ پولیس نے انکشاف کیا کہ ان ”طبی مراکز“ میں عورتوں کو زبردستی قید کرکے بھی رکھا جاتا ہے۔ ان کے ساتھ زبردستی زیادتی کی جاتی ہے اور ان کے پیدا ہونے والے بچوں کو مہنگے داموں بیچ دیا جاتا ہے۔ تاہم تفصیلات کے مطابق زیادہ تر وہ خواتین یہاں آتی ہیں کہ جو کسی وجہ سے حمل یا پیداہونے والے بچے کو چھپانا چاہتی ہیں اور نتیجتاً ایسے بچوں کو فروخت کردیا جاتا ہے۔

مزید : انسانی حقوق


loading...