بھارت کا قومی مسئلہ ’ریپ‘

بھارت کا قومی مسئلہ ’ریپ‘
بھارت کا قومی مسئلہ ’ریپ‘

  


نئی دہلی (بیورورپورٹ) بھارت میں ریپ کا مسئلہ اس خوفناک حد تک بڑھ چکا ہے کہ ایک حالیہ سروے میں 90 فیصد شہریوں نے ریپ کو انڈیا کے سب سے بڑے مسئلوں میں سے ایک قرار دے دیا۔ ایک سال قبل دہلی میں ایک طالبہ کو چلتی بس میں متعدد افراد نے زیادتی کا نشانہ بنایا اور بدترین تشدد کیا جو کہ طالبہ کی ہلاکت کا باعث بنا۔ اگرچہ اس کیس میں چار افراد کو سزائے موت سنائی گئی لیکن انڈیا میں ریپ کا قبیح جرم کسی طور کم ہونے میں نہیں آرہا۔ ایک حالیہ سروے میں ہر دس میں سے 9 شہریوں نے ریپ کو انڈیا کا بہت بڑا مسئلہ قرار دے دیا، جبکہ 82 فیصد شہریوں نے کہا کہ یہ مسئلہ کنٹرول ہونے کی بجائے مسلسل بڑھتا جارہا ہے۔ 74 فیصد شہریوں نے کہا کہ ملک میں ریپ کے مجرموں کو سزا دینے سے متعلق قوانین انتہائی نرم ہیں جس کے باعث یہ مسئلہ بڑھ رہا ہے۔ جبکہ78 فیصد کا خیال تھا کہ اس مسئلہ میں خوفناک اضافہ کی اصل وجہ پولیس ہے۔ ان شہریوں نے کہا کہ پولیس ریپ کے جرائم کی تفتیش میں انتہائی نااہلی کا مظاہرہ کرتی ہے۔ انڈیا میں ہونے والے گینگ ریپ کے کیس مسلسل قومی اور بین الاقوامی میڈیا میں توجہ کا مرکز بنے ہوئے ہیں۔ ان میں حالیہ کچھ عرصے میں دہلی میں ہونے والا گینگ ریپ، ممبئی میں ایک فوٹو جرنلسٹ کا گینگ ریپ اور بنگال میں پنچایت کے حکم پر ہونے والا گینگ ریپ نمایاں رہے۔

مزید : انسانی حقوق


loading...