وارڈن کو تشدد کا نشانہ بنانے کامقدمہ ،10سالہ طالبعلم کے کیس کی سماعت کل ہوگی

وارڈن کو تشدد کا نشانہ بنانے کامقدمہ ،10سالہ طالبعلم کے کیس کی سماعت کل ہوگی

  



لاہور(نامہ نگار)ایڈیشنل سیشن جج سہیل شفیق کی عدالت میں ٹریفک وارڈن کو تشدد کا نشانہ بنانے کے مقدمہ میں ملوث 10سالہ طالبعلم کے کیس کی سماعت کل 27اپریل کو ہوگی ۔ملزم طلحہ شہباز کی ضمانت منظور کرتے ہوئے تفتیشی افسر نے مقدمہ کا ریکارڈ طلب کررکھا ہے ۔واضح رہے کہ پچھلی سماعت پر عدالت نے ایف آئی آر دیکھ کر برہمی کا اظہار کیا تھا کہ کمسن عمر کا لڑکا کیسے ٹریفک وارڈن پر تشدد کرسکتا ہے ۔استغاثہ کے مطابق گلبرک کے رہائشی 10سالہ طلحہ شہباز کے خلاف ٹریفک وارڈن عاصم نے تشدد کا نشانہ بنائے جانے پر تھانہ نصیر آباد میں مقدمہ درج کروارکھا ہے ۔       پچھلی سماعت پر طلحہ شہباز نے اپنی درخواست ضمانت دائر کرتے ہوئے موقف اختیار کیا تھا کہ وہ اپنے بھائی کے ساتھ دودھ دینے نصیرآباد جا رہا تھا کہ راستے میں گلاب دیوی ہسپتال کے قریب ایک گاڑی نے ٹکر ماری ،اسی اثناء میں سفیان وارڈن نے گاڑی والے کو چھوڑ دیا اور انہیں پکڑلیا ،بعدازاں ان کا والد شہباز بھی موقع پرپہنچ گیا اور سفیان وارڈن سے تلخ کلامی ہوگئی اور اسی وجہ سے ایک دوسرے وارڈن عاصم ٹریفک نے اس سمیت نامعلوم افرا دکے خلاف تھانہ نصیرآباد میں مقدمہ درج کروادیاتھا۔

مزید : میٹروپولیٹن 4