اقتصادی راہداری پر غلط فہمیاں دور کرنے کیلئے تمام سیاسی رہنماؤں کو بریفنگ دی جا ئیگی ‘ اسحق ڈار

اقتصادی راہداری پر غلط فہمیاں دور کرنے کیلئے تمام سیاسی رہنماؤں کو بریفنگ دی ...

  



 اسلام آباد (اے پی پی) وزیرخزانہ سینیٹر اسحاق ڈار نے کہا ہے کہ پاک چین اقتصادی راہداری پر غلط فہمیاں دور کرنے کیلئے وزیراعظم کی وطن واپسی پر تمام سیاسی و پارلیمانی جماعتوں کے سربراہان کو وزارت منصوبہ بندی و ترقیات کی جانب سے بریفنگ دی جائے گی، پاکستان کو ایشیاء کا ٹائیگر بنانے کے حامل منصوبے پر کوئی اختلاف نہیں ہونا چاہئے، اس منصوبہ کی شفافیت پر کوئی سمجھوتہ نہیں کریں گے، آئی ایم ایف کا ساتواں جائزہ اجلاس یکم سے 10 مئی تک دوبئی میں ہوگا جبکہ ورلڈ بنک کے سربراہ اس کے بعد پاکستان کا دورہ کریں گے۔ ہفتہ کو پی آئی ڈی میں پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے سینیٹر اسحاق ڈار نے کہاکہ آئی ایم ایف اور ورلڈ بنک کے اجلاسوں میں شرکت کیلئے چند دن قبل امریکہ گیا جہاں پر بڑی موثر ملاقاتیں ہوئیں، اہم اداروں کے سربراہان اور چینی ہم منصب سے ملاقات کی، مختصر وقت میں 32 ملاقاتیں ہوئیں۔ یہ دورہ انتہائی کامیاب رہا، پاکستان کی معیشت کے بارے میں اب یہ تسلیم کیا جارہا ہے کہ یہ درست سمت جارہی ہے۔انہوں نے کہا کہ آئندہ ہفتے دو سے6 مئی تک ایشیائی ترقیاتی بنک کا سالانہ اجلاس باکو میں ہوگا جس میں وہ پاکستان کی نمائندگی کریں گے۔ دوسرے ممالک اور ادارے جن منصوبوں میں سرمایہ کاری یا قرض دینے سے ہچکچاتے ہیں، ایشیائی ترقیاتی بنک تھر میں کول منصوبہ کیلئے فنانسنگ کیلئے تیار ہے، اس اجلاس میں انرجی اور شرح نمو پر بات ہوگی۔انہوں نے بھارت میں اقتصادی راہداری کے حوالے سے ایک سوال کے جواب میں کہا کہ پاک چین اقتصادی راہداری بڑا منصوبہ ہے اسے ہضم کرنا مشکل ہے۔پاکستان میں دھرنے کی صورتحال نہ ہوتی تو اس معاہدے پر دستخط سات ماہ قبل ہوجاتے۔ انہوں نے کہا کہ سیاسی جماعتیں اس منصوبے پر ملی بیداری کا ثبوت دیں، کوئی نہیں چاہے گا کہ پاکستان ایشین ٹائیگر نہ بنے۔انہوں نے کہا کہ چین کے کمرشل بنک پاکستان کو آسان شرائط پر قرض دیں گے۔ ملتان سکھر موٹر وے حکومت خود بنائے گی۔ ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ یہ خبریں درست نہیں تھیں کہ مسلم لیگ (ن) جوڈیشل کمیشن کیلئے اپنے وکلاء کی ٹیم تبدیل کردی ہے۔ ہفتہ کی صبح ہم نے پاور آف اٹارنی جمع کرائی ہے اور معروف قانون دان شاہد حامد کو وکیل مقرر کیا ہے۔

مزید : صفحہ اول


loading...