امریکہ میں 50 لاکھ بچوں کے والدین میں سے کوئی ایک جیل میں ہے: تحقیق

امریکہ میں 50 لاکھ بچوں کے والدین میں سے کوئی ایک جیل میں ہے: تحقیق
امریکہ میں 50 لاکھ بچوں کے والدین میں سے کوئی ایک جیل میں ہے: تحقیق

  

واشنگٹن(مانیٹرنگ ڈیسک) امریکہ میں ہونے والی حالیہ تحقیق میں انتہائی افسوسناک بات سامنے آئی ہے اور انکشاف ہوا ہے کہ ملک بھر میں 50 لاکھ بچوں کے والدین میں سے کوئی ایک جیل میں ہے جس کی وجہ سے بچوں کیلئے تعلیمی ، معاشی اور نفسیاتی مسائل پیدا ہورہے ہیں۔

نیوز ویب سائٹ آر ٹی کے مطابق تحقیق میں بتایا گیا ہے کہ گزشتہ 4 دہائیوں کے دوران بچوں کے اپنے والدین کے ہمراہ جیل میں پروش پانے کے واقعات میں 500 فیصد اضافہ ہوا ہے جس کی اہم وجہ امریکہ میں منشیات اور دیگر جرائم کے خلاف بننے والے سخت قوانین ہیں۔

رپورٹ میں مزید بتایا گیا ہے کہ جن بچوں کے والدین جیل میں موجود ہیں ان کی عمریں 10 سال سے کم ہیں اور جس خاندان کے گھر کا مرد جیل میں چلا جائے تو اس کی وجہ سے خاندان کی آمدنی میں کم از کم 22 فیصد تک کمی واقع ہوجاتی ہے جس کی وجہ سے بیشتر خاندانوں کی نظریں خیراتی اداروں پر لگی رہتی ہیں ۔

رپورٹ میں مزید بتایا گیا ہے کہ امریکہ کی مختلف ریاستوں میں والدین کے جیل میں جانے کی شرح بھی مختلف ہے۔ امریکی ریاست نیو جرسی میں والدین کے جیل میں جانے کی شرح سب سے کم 3 فیصد ہے جبکہ سب سے زیادہ کینٹکی میں 13 فیصد ہے۔امریکہ کے 50 لاکھ بچے جن کے والدین جیلوں میں قید ہیں ان میں سے 5 لاکھ 3 ہزار کیلیفورنیا، 4 لاکھ 77 ہزار ٹیکساس اور 3 لاکھ 12 ہزار فلوریڈا میں ہیں۔

محققین نے اپنی ریسرچ رپورٹ میں بتایا ہے کہ امریکی جیلوں میں قید 24 سال یا اس سے کم عمر کے مرد وں میں سے 45 فیصد ایک یا ایک سے زائد بچے کے باپ ہیں جبکہ اسی عمر کی وفاقی جیلوں میں قید 48 فیصد اور ریاستی جیلوں میں قید 55 فیصد خواتین ایک یا ایک سے زائد بچوں کی والدہ ہیں۔

امریکہ کی جیلوں میں 22 لاکھ لوگ قید ہیں اور ان میں سے 91 فیصد بالغ جبکہ 9 فیصد بچے ہیں ۔ دی سینٹینسنگ پراجیکٹ (The Sentencing Project) کے مطابق امریکی جیلوں میں 8 لاکھ 58 ہزار سیاہ فام جبکہ 4 لاکھ 64 ہزار لاطینی امریکہ کے باشندے قید ہیں اور ان کے جرائم کرنے کی سب سے بڑی وجہ تعلیم کی کمی ہے۔

مزید :

ڈیلی بائیٹس -