شہبازشریف نے چینی انکوائری کمیشن کی رپورٹ میں 2 ہفتے کی تاخیر ملی بھگت قراردیدی

شہبازشریف نے چینی انکوائری کمیشن کی رپورٹ میں 2 ہفتے کی تاخیر ملی بھگت ...
شہبازشریف نے چینی انکوائری کمیشن کی رپورٹ میں 2 ہفتے کی تاخیر ملی بھگت قراردیدی

  

لاہور(ڈیلی پاکستان آن لائن)مسلم لیگ ن کے صدر اور اپوزیشن لیڈر قومی اسمبلی شہبازشریف نے چینی انکوائری کمیشن کی رپورٹ میں 2 ہفتے کی تاخیر ملی بھگت قراردیدی۔

میڈیارپورٹس کے مطابق مسلم لیگ کے صدرشہبازشریف نے کہاہے کہ کابینہ ،ای سی سی کی سربراہی اور سبسڈی کی منظوری دینے والے ذمہ دار ہیں ،فیصلوں کے ذمہ دار عمران نیازی اور عثمان بزدار ہیں ،حتمی رپورٹ نہ آنا عمران نیازی صاحب کااعتراف جرم ہے ،حتمی رپورٹ میں تاخیر100 ارب روپے کے حکومتی ڈاکے کی تصدیق ہے ۔

اپوزیشن لیڈر قومی اسمبلی نے کہاہے کہ رپورٹ میں تاخیر چینی ڈکیتی کے اصل ذمہ داروں کو بچانے کی کوشش ہے ،چینی انکوائری رپورٹ چھپانے سے عمران خان کا جرم چھپ نہیں سکتا،انہوں نے کہاکہ رپورٹ میں تاخیر سے عوام سے حقائق نہیں چھپائے جا سکتے ،عوام جانتے ہیں کہ ان کے آٹے چینی پر ڈاکاکس نے ڈالا۔

شہبازشریف کا کہنا ہے کہ کسی مزید انکوائری اورفرانزک کی ضرورت نہیں ،انکوائری کمیشن منصفانہ نہیں ،کمیٹی ارکان ہی انکوائری کمیشن کے رکن بھی ہیں ،انہوں نے کہاکہ شاہد خاقان عباسی اور خرم دستگیر کو پیش ہونے کی اجازت دی جائے،ہمارے نامزدارکان پیش ہونگے تو دودھ کا دودھ اور پانی کا پانی ہو جائے گا۔

مزید :

اہم خبریں -قومی -علاقائی -پنجاب -لاہور -