سیالکوٹ میں نالہ ڈیک اور دریائے چناب میں طغیانی ،30سے زائد دیہات ڈوب گئے ہزاروں ایکڑرقبہ زیر آب

سیالکوٹ میں نالہ ڈیک اور دریائے چناب میں طغیانی ،30سے زائد دیہات ڈوب گئے ...

سیالکوٹ (ثناءنےوز) سیالکوٹ میں نالہ ڈےک اور دریائے چناب میں طغےانی کی وجہ سے 30سے زائد دیہات اورہزاروں ایکٹر رقبہ زیرآب آگےا ہے جبکہ تحصےل پسرور میں نوادے، مچھانہ ، جبو کے سمیت پانچ دیہاتوں کے سینکڑوں لوگ پانی میں پھنس چکے ہیںاور ضلعی انتظامیہ کی امدادی ٹےمیں ان علاقوں میں پھنسے لوگوں تک نہ پہنچ سکی ہیں اور سیلاب میں پھنسے ان لوگوں نے ضلعی انتظامیہ کے خلاف احتجاجی مظاہرہ بھی کیا ہے ۔ تحصےل پسرور کے علاقہ سے گزرنے والے برساتی نالہ ڈےک میں اونچے درجے کے سیلاب کی وجہ سے سیلابی پانی کناروں سے باہر نکل آیا ہے۔ سینکڑوں ایکٹر رقبہ پر فصلوں کو نقصان پہنچا ہے اور اس وقت ایک بڑے رقبہ پر سیلابی پانی پھےل چکا ہے۔ ان دیہاتوں میں اشیاءخوردونوش کی قلت پیدا ہوگئی ہے ۔سیلاب کا پانی نوادے ، جبو کے اور مچھانہ کے دیہاتوں میں لوگوں کے گھروں میں بھی داخل ہوگےا ہے ۔ادھر ڈسٹرکٹ کوآرڈینیشن آفیسر سیالکوٹ زاہد سلیم گوندل نے پسرور کے موضعات چک رچانہ اورجمبو کے نوادے میں نالہ دیک کے کٹاو¿ سے ہونے والے نقصانات کا جائزہ لیا ۔ انہوں نے محکمہ مال نے افسران کو ہدایت کی کہ وہ تباہ ہونے والی فصلوں کا ریکارڈ بنائیں ۔ڈسٹرکٹ فلڈ ریلیف آفےسر ملک عابد اعوان کے مطابق نالہ ڈےک میں سترہ ہزار چار سو ساٹھ کیوسک پانی ہے تاہم متاثرہ علاقہ میں امدادی سرگرمیاں جاری ہیں۔ادھر دریائے چناب میں بھی نچلے درجے کا سیلاب ہے جوکہ دریائے چناب اور دریائے مناورتوی کے سیلابی پانی کی وجہ سے علاقہ بجوات کے سات دیہات چونگےاں ، محال ، پل بجواں ، کھوجے چک ،شاہ پور ، غازی پور اوربےلہ بے چراغ کے ساتھ ساتھ سینکڑوں ایکٹر رقبہ زیر آب آگےا ہے ۔محکمہ انہار کے مطابق ہیڈ مرالہ کے مقام سے 11لاکھ کیوسک پانی کے گزرنے کی گنجائش موجود ہے اس لئے خطرے والی کوئی بات نہیں ہے۔

مزید : صفحہ اول