وزیر اعظم سے وزیر قانون کی ملاقات، سپریم کورٹ میں پیشی کے مختلف پہلوﺅں پر غور

وزیر اعظم سے وزیر قانون کی ملاقات، سپریم کورٹ میں پیشی کے مختلف پہلوﺅں پر غور

اسلام آباد(آئی این پی) وزیر اعظم راجہ پرویز اشرف سے وزیر قانون فاروق ایچ نائیک نے ہفتہ کو یہاں وزیر اعظم ہاﺅس میں ملاقات کی ‘ ملاقات میں وزیر اعظم کی (کل) پیر کو توہین عدالت کیس میں سپریم کورٹ میں طلبی کے حوالے سے معاملات زیر غور آئے ۔ ذرائع کے مطابق وزیراعظم اور وزیر قانون نے اس بات پر اتفاق کیا کہ حکومت اور عدلیہ کے درمیان محا ذآرائی کسی کے مفاد میں نہیں فاروق ایچ نائیک نے وزیر اعظم کو مختلف قانونی آپشنز سے آگاہ کیا ۔ ذرائع کے مطابق ملاقات میں اٹارنی جنرل کی طرف سے دی جانے والی یہ رائے کہ وزیراعظم کا مقام ججز سے کہیں اونچا ہے اس لئے انہیں سپریم کورٹ میں پیش نہیں ہونا چاہیے پر بھی تفصیلی غور کیا گیا اور اس حوالے سے وزیر قانون نے وزیراعظم کو رائے دی۔ ذرائع کے مطابق پارٹی کے بیشتر رہنماﺅں اور اتحادیوں خاص طور پر ایم کیو ایم اور اے این پی کا بھی وزیراعظم کو عدالت کے سامنے پیش نہ ہونے کا مشورہ ہے۔ دریں اثناءذرائع کے مطابق پیپلزپارٹی کے چیئرمین بلاول بھٹو زرداری نے بھی وزیر اعظم راجہ پرویز اشرف سے کہا ہے کہ اگروہ چاہیں توسپریم کورٹ میں ذاتی طورپر پیش ہوسکتے ہیں ‘پارٹی ان پر خط نہ لکھنے کے حوالے سے کوئی دباﺅ نہیں ڈالے گی تاہم وزیر اعظم نے پارٹی سے بالاتر ہوکر عدالت میں پیش ہونے سے انکار کرتے ہوئے کہا ہے کہ وہ پارٹی نظم وضبط کے پابند ہیں اور کسی ایسے فعل میں ملوث نہیں ہوں گے جس کی پارٹی باضابطہ منظوری نہیں دے گی۔

مزید : صفحہ اول