پاکستان میں غریب کیلئے سزا، بڑوں کے لئے جزا کا نظام ہے، صاحبزادفضل کریم

پاکستان میں غریب کیلئے سزا، بڑوں کے لئے جزا کا نظام ہے، صاحبزادفضل کریم

ؒٓؒٓٓلاہور(نمائندہ خصوصی(سنی اتحاد کونسل پاکستان کے چیئرمین، مرکزی جے یو پی کے سربراہ اور رکن قومی اسمبلی صاحبزادہ فضل کریم نے کہا ہے کہ ایک وزیر پر قوم کے سالانہ چھ کروڑ روپے خرچ ہوتے ہیں جبکہ عام شہری کی صحت پر حکومت سالانہ 194 روپے اور تعلیم پر 145روپے خرچ کرتی ہے۔ حکومت ڈرون حملوں کے خلاف عالمی عدالت انصاف میں جائے۔ عالمی برادری کی ڈرون حملوں پر خاموشی بے حسی کی بدترین مثال ہے۔ پٹرول کی قیمتوں میں حالیہ اضافہ حکومت کا عوام پر ڈرون حملہ ہے۔ پاکستان میں غریب شہری کے لیے سزا اور بڑوں کے لیے جزا کا ظالمانہ نظام مسلط ہے۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے انجمن طلبائے اسلام پاکستان کے سابق مرکزی صدر ملک نعیم شہباز اعوان کی طرف سے اپنے اعزاز میں دیئے گئے استقبالیہ سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔ صاحبزادہ فضل کریم نے مزید کہا کہ پاکستانی حکمران خلافت ِ راشدہ کے عادلانہ نظام کی پیروی کریں۔ انہوں نے کہا کہ عالم اسلام برما، عراق، افغانستان، فلسطین اور کشمیر کی کربلا پر خاموش رہ کر کوفیوں کا کردار ادا کر رہا ہے۔ انہوں نے کہا کہ بجلی کا بحران عذاب کی شکل اختیار کر چکا ہے۔ ملک کے 900شہروں اور قصبوں میں 15، 15 گھنٹے بجلی بند رہتی ہے جبکہ ٹیوب ویل بند ہونے کی وجہ سے فصلیں بھی تباہ ہو رہی ہیں۔ انہوں نے کہا کہ مہنگائی کنٹرول سے باہر ہو چکی ہے، افراطِ زر ناقابل برداشت ہو چکا ہے، بیرونی سرمایہ کاری رک چکی ہے، قوم مایوسی اور ملک بحرانوں میں مبتلا ہے جبکہ حکمرانوں نے خوف اور سمجھوتے کو قومی پالیسی بنا لیا ہے۔

مزید : صفحہ آخر