سعودی بیورو کریسی کا شکار ہونے والا با ہمت ترین پاکستانی

سعودی بیورو کریسی کا شکار ہونے والا با ہمت ترین پاکستانی
سعودی بیورو کریسی کا شکار ہونے والا با ہمت ترین پاکستانی

روزنامہ پاکستان کی اینڈرائیڈ موبائل ایپ ڈاؤن لوڈ کرنے کے لیے یہاں کلک کریں۔

ریاض(مانیٹرنگ ڈیسک)پاکستان والد اور سعودی ماں کے بطن سے جنم لینے والا ابوعبداللہ دارلحکومت کے علاقہ منفوحد میں درجنوں عزباءکو گھر گھر جا کر کھانا پہنچاتا ہے اگرچہ مملکت نے تاحال اسے اپنے شہری ہی تسلیم نہیں کیا ہے۔اخبار ابوعبداللہ کے والد کا تعلق پاکستان سے تھا اور اس نے50سال تک مملکت کے شعبہ صحت میں بطور اسٹیٹ فارماسسٹ کام کیا ۔سات بہنوں اور چار بھائیوں پر مشتمل اس خاندان کو والدین کی وفات کے بعد اپنی پہچان ڈھونڈنے کا مسئلہ درپیش ہوا اور تاحال ان میں سے صرف دو بہنیں ہی سعودی شہریت حاصل کرپائی ہیں۔ابوعبداللہ کا کہنا ہے کہ اپنی پہچان کے بنیادی حق سے محرومی کے باوجود علاقے کے غرباءکیلئے حتی المقدور خدمت سرانجام دے رہا ہے۔وہ علاقے سے اضافی کھانا اکٹھا کرتا ہے اور اپنے پک اب ٹرک پر لاد کر ضرورتمند کو پہچانتا ہے اس کی عمر40سال سے زائد ہو چکی ہے اور وہ سات سال سے یہ خدمات سرانجام دے رہا ہے۔اس کا کہنا ہے کہ وہ وطن سے محبت کرتا ہے اور منتظر ہے کہ وہ دن کب آئے گا جب وطن بھی اسے اور اس کے بہن بھائیوں کو اپنا شہری تسلیم کر لے گا۔

مزید : انسانی حقوق