غیر ملکی کارکن کے اقامے کی توسیع ایک یا دو سال کے لئے ہوتی ہے

غیر ملکی کارکن کے اقامے کی توسیع ایک یا دو سال کے لئے ہوتی ہے

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app

جدہ (بیورورپورٹ) سعودی محکمہ پاسپورٹ کے ترجمان طلال اشلھوب نے واضح کیا ہے کہ پلاٹ کی ملکیت کا غیر ملکی کے اقامہ (ریزیڈنٹ پرمٹ) کے اجراء اور توسیع پر کسی طرح کا کوئی اثر نہیں پڑے گا، اس کا دارومدار وزارت محنت کی جانب سے تجارتی عملے کے لئے جاری کئے جانے والے کارڈ پر ہوگا۔ آجر کا جو مطالبہ ہوگا اسی کے مطابق کام ہوگا، انہوں نے کہا کہ غیر ملکی کارکن کے اقامے کی توسیع ایک یا دو سال کے لئے مقررہ قواعد و ضوابط کے تحت ہوتی ہے، آئندہ بھی ایسے ہی ہوگا۔ اس کا اس بات سے کوئی تعلق نہیں کہ غیر ملکی سرمایہ کار زمین کا مالک ہے یا نہیں۔ باخبر ذرائع کا کہنا ہے کہ غیر ملکی کارکنان میں سے ڈاکٹروں، انجینئرز، اساتذہ اور مشیران وغیرہ کے اقامے دو سال کی مدت کے لئے بنتے ہیں۔ البتہ سعودی شہری کی غیر ملکی بیوی کا اقامہ 4 برس کے لئے جاری کیا جاتا ہے۔ یہی سہولت طلبہ اور سرکاری اداروں کے ملازمین کو بھی دی جاتی ہے۔ محکمہ پاسپورٹ نے اپنی ویب سائٹ پر بتایا اور غیر ملکی طلبہ کورس کی مدت چار سال تک کے لئے اقامہ جاری کیا جاسکتا ہے۔ محکمہ پاسپورٹ نے یہ بھی بتایا ہے کہ وزارتوں اور سرکاری اداروں اور محکموں کے غیر ملکی کارکنان اور ان کے اہل و عیال کے لئے ملازمت کی مدت یا چار برس کے لئے اقامہ جاری ہوسکتے ہیں۔ محکمہ پاسپورٹ نے بتایا کہ سیاسی پناہ گزینوں یا ہنگامی لینڈنگ کی صورت میں مملکت پہنچنے والوں کے لئے استثنائی ضابطے ہیں۔

مزید :

علاقائی -