جہیز ایک لعنت ہے تو پھر پاکستانی معاشرے میں یہ لعنت فروغ کیو ں پا رہی ہے ؟سلگتے سوال کا جواب جانئے

جہیز ایک لعنت ہے تو پھر پاکستانی معاشرے میں یہ لعنت فروغ کیو ں پا رہی ہے ...
جہیز ایک لعنت ہے تو پھر پاکستانی معاشرے میں یہ لعنت فروغ کیو ں پا رہی ہے ؟سلگتے سوال کا جواب جانئے

روزنامہ پاکستان کی اینڈرائیڈ موبائل ایپ ڈاؤن لوڈ کرنے کے لیے یہاں کلک کریں۔

ہمارے معاشرے میں جہیز کا اطلاق اُس سامان پر ہوتا ہے جسے دلہن میکے سے اپنے ساتھ لاتی ہے،لیکن اسلام میں اس کی کوئی حقیقت نہیں ہے۔ جہیز کی رسم کی وجہ سے کتنی بچیوں کے بالوں میں چاندی آجاتی ہے، لیکن وہ پیا دیس نہیں سدھار پاتیں۔ہندوستان میں ہندو معاشرہ میں قدیم زمانہ سے عورت کو جہیز دینے کا تصور چلا آ رہا ہے ، کیوں کہ ہندو مذہب میں عورت کو اپنے والدین کی جائیداد میں میراث نہیں ملتی، جب وہ اپنے سسرال رخصت کی جاتی تو سمجھا جاتا کہ اب اس خاندان سے اس کا کوئی رشتہ نہیں رہا ، اس لیے کوشش یہ کی جاتی کہ اس کو کچھ دے دلا کر رخصت کر دیا جائے۔ اسلامی شریعت میں مرد و عورت دونوں حقوق کے اعتبار سے مساوی درجہ کے حامل ہیں۔ ماں کو اپنی اولاد کے ترکہ سے ، بیٹی کو اپنے ماں باپ کے ترکہ سے اور بیوی کو شوہر کے ترکہ سے لازماً میراث ملتی ہے اور اس کا تعلق اپنے خاندان سے باقی رہتا ہے ، بد قسمتی سے ہندو سماج سے متاثر ہو کر مسلمانوں نے بھی ایک طرف جہیز کی غلط رسم کو اختیار کر لیا اور دوسری طرف عورتوں کو حقِ میراث سے محروم کرنے لگے ہیں۔جہیز پہلے غریب اور متوسط طبقہ کا مسئلہ تھا مگر آج دولتمند طبقہ بھی اس سے پریشان ہے کیونکہ آج اپنی شان و شوکت کے اظہار کے لئے معاشرہ کے نام نہاد اعلیٰ اور دولتمند طبقات انتہائی اوچھے طریقہ اختیار کرنے لگے ہیں۔ 

۔۔۔ویڈیو دیکھیں۔۔۔

مزید : وڈیو گیلری