2018ء کے وسط مدتی انتخابات پراثر انداز ہونے کیلئے روس نے متعدد سائبر حملے کئے 

        2018ء کے وسط مدتی انتخابات پراثر انداز ہونے کیلئے روس نے متعدد سائبر ...

  

 واشنگٹن(اظہر زمان، بیورو چیف) 2018ء میں ہونے والے امریکی وسط مدتی انتخابات پر اثر انداز ہونے کے لئے روس نے متعد د  سائبر حملے کئے جنہیں امریکی انٹیلی جنس اداروں نے ناکام بنا دیا۔ یہ الزام پہلی مرتبہ نیشنل سکیورٹی ایجنسی (این ایس اے) کے ڈائریکٹر پال ناکاسون اور امریکی سائیبر کمان کے سربراہ کے سینئر مشیر مائیکل سلمائیر کی طرف سے پہلی مرتبہ سامنے آیا ہے۔ ”فارن افیئر“ میگزین کی تازہ اشاعت میں یہ سنسنی خیز انکشاف کیا گیا ہے۔ ان دونوں ماہرین کے مطابق ان دونوں انٹیلی جنس اداروں نے ان سائیبر حملوں کا مل کر مقابلہ کیا اور انہیں ناکام بنا دیا۔ رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ ان دو اداروں نے ایک مشترکہ ٹاسک فورس تشکیل دی جس نے ہوم لینڈ سکیورٹی کے محکمہ کو انتخابی انفراسٹرکچر کی سکیورٹی کو سخت کرنے کی ہدایت کی۔ اسی طرح ایف بی آئی سے درخواست کی گئی کہ وہ سوشل میڈیا پلیٹ فارم کے ذریعے ووٹروں کے فیصلے پر اثر انداز ہونے کی تمام بیرونی کوششوں کو بلاک کر دیں۔ دونوں انٹیلی جنس ماہرین نے اپنے مشترکہ مضمون میں لکھا ہے کہ ”ان تمام کوششوں کی بدولت امریکہ نے وسط مدتی انتخابات میں مداخلت کی ایک منظم کوشش کو کامیاب نہیں ہونے دیا“ انہوں نے کہا کہ امریکہ کو ایسے سائیبر حملوں کا مقابلہ کر کے انہیں ناکام بنانے کی اقدامات کو ہر طرف جاری رکھنا چاہئے۔ ”فیس بک“ نے بھی اس کے پلیٹ فارم کو وسط مدتی انتخابات پر اثر انداز ہونے کے لئے استعمال ہونے کی تصدیق کی ہے جس کے مطابق زیادہ امکان ہے کہ حملہ کرنے والے روسی ہیں۔

سائبر حملے

مزید :

صفحہ اول -