قتل‘ اغواء کی وارداتیں‘ ہائی کورٹ بار  عہدیداروں کی ہنگامی میٹنگ‘ چیف جسٹس  سے نوٹس لینے کا مطالبہ‘ پولیس ملزم گرفتارکرے  چوہدری طاہر محمود‘ سجاد حیدر‘ خانیوال میں مختلف  واقعات کے خلاف ریلی‘ نعرے بازی

   قتل‘ اغواء کی وارداتیں‘ ہائی کورٹ بار  عہدیداروں کی ہنگامی میٹنگ‘ چیف ...

  

 ملتان + خانیوال(خصو صی رپورٹر‘بیورو نیوز) دیپالپور میں خاتون وکیل کے اغواء اور قصور میں وکیل کے قتل کے خلاف ہائیکورٹ ملتان بار کے عہدیداران کی میٹنگ ہوئی۔صدر ہائیکورٹ بار چوہدری طاہر محمود نے وکلاء کمیونٹی کے عدم تحفظ پر خدشات کا اظہار کردیا۔انہوں (بقیہ نمبر5صفحہ6پر)

نے کہا کہ جرائم پیشہ افراد کی وکلاء کے خلاف بڑھتی کارروائیوں پر تشویش ہے، چیف جسٹس آف پاکستان اور چیف جسٹس لاہور ہائی کورٹ وکلاء  پر بڑھتے تشدد کے واقعات کی ازخود نوٹس سماعت کریں،وکلاء تحفظ بل منظور کیا جائے،پاکستان اور پنجاب بار کونسل سے بھی مطالبہ کرتے ہیں کوئی لائحہ عمل بنائیں۔وکلاء کے اغوا اور قتل میں ملوث ملزمان کو فوری گرفتار کیا جائے۔اس موقع پر جنرل سیکرٹری سجاد حیدر سپرا، صدر ڈسٹرکٹ بار عمران رشید سلہری اور ایگزیکٹیو باڈی کے ممبران موجود تھے۔ ڈسٹرکٹ بار ڈی ایل ایف کی طرف سے نسرین ارشاد ایڈووکیٹ کے اغواء تشدد اوردیگر وکلاء کے قتل کے واقعات کیخلاف احتجاجی ریلی نکالی گئی۔ ریلی کے شرکاء سے خطاب کرتے ہوئے ڈی ایل ایف کے چیئرمین اور امیدوار پنجاب بار کونسل ملک طارق نوناری ایڈووکیٹ نے کہاکہ خاتون وکیل کی یہ پکار کہ میرے سرپر دوپٹہ دو عدل وانصاف کی بالادستی اورآئین وقانون کی حکمرانی کے دعویدار حکمرانوں کے لیے لمحہ فکریہ اورسوالیہ نشان ہے۔انہوں نے کہا کہ حکومت وکلاء کے مجرموں کوکیفر کردار تک پہنچائے اور وکلاء برادری کی جان ومال،عزت کی حفاظت کویقینی بنانے کے لیے عملی اقدام اٹھائے اورپارلیمنٹ سے بل منظور کرایاجائے۔ محرم عاشورہ تک وکلاء کے قاتلوں اورمجرموں کو گرفتار نہ کیاگیا تو کالے کوٹ کی حفاظت کے لیے ملک گیر تحریک شروع ہو گی  اور کسی بھی قربانی سے گریز نہیں کیاجائے گا۔اس موقع پر اجمل خان بھٹہ،ملک آفتاب عباس،شیخ توقیر تبسم،میڈم نگہت کیانی،طاہر رشیدبخاری، میاں نوراحمد سہو،جام سجاد احمد جونہ، رانا محمدریاض، ودیگرمقررین نے کہاکہ چیف جسٹس آف پاکستان کو وکلاء کے ان واقعات پر از خود نوٹس لیناچاہیے اوروکلاء قیادت کو اس حوالے سے قانون سازی کے لیے موثر آواز اٹھاناچاہیے۔انہوں نے کہاکہ وکلاء کسی بھی معاشرے کے چوکیدار ہوتے ہیں۔عدل وانصاف کی بالادستی کے لیے کسی بھی قربانی سے گریز نہیں کریں گے۔احتجاجی ریلی کی قیادت ملک طارق نوناری،میڈم نگہت کیانی،ملک آفتاب عباس،ملک اجمل بھٹہ ودیگروکلاء کررہے تھے۔احتجاجی ریلی میں چوہدری ظفراقبال آزاد، محمدعارف خان، چوہدری شہباز،ملک شوکت رمضان ساندی، چوہدری عبدالحکیم صدیقی،چوہدری کامران اشرف،مہر اعجازورک،چوہدری وقاص حمید،ملک شبیراعوان،ملک ساجد نوناری،سردار مستنصر باللہ،چوہدری شہزاد احمد،چوہدری محمداویس، شیخ جاوید اقبال،شیخ مدثر احمد،چوہدری محمدہارون الرشید،جام طاہر رسول،جاوید اسلم پراچہ،ملک حنان نوناری اوردیگرخواتین وکلاء نے بھی بڑی تعدادمیں شرکت کی۔ریلی ضلع کچہری کی مختلف گلیوں سے چکر لگاتے ہوئے بارروم پہنچی۔ ریلی کے شرکاء زندہ ہے وکلاء،زندہ وکلاء کے نعرے لگارہے تھے۔

ریلی

مزید :

ملتان صفحہ آخر -